کردیا پریشان مجھے نجومی نے ہاتھ دیکھ کر

کردیا پریشان مجھے نجومی نے ہاتھ دیکھ کر
کہتا ہے تجھے موت نہیں کسی کی یاد مارے گی۔

کردیا پریشان مجھے نجومی نے ہاتھ دیکھ کر


kardiya pershan majhey najoomi ney hath dhek kar
kehta hai tujhey mout nehi kisi ki yaad marey gi



ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se