Ajnabi Shaam By John Elia - اجنبی شام


Jaun Elia- جون ایلیا
Ajnabi Shaam By John Elia - اجنبی شام


اجنبی شام 
ajanabi shaam


دھند چھائی ہوئی ہے جھیلوں پر 
dhundh chayi hui hai jheelo per

اُڑ رہے ہیں پرند ٹیلوں پر 
urh rahe hai paranday tilo per

سب کا رخ ہے نشیمنوں کی طرف 
sub ka rukh hai nashimino ki tarf

بستیوں کی طرف، بنوں کی طرف 
bastiyo ki taraf bano ki tarf

اپنے گلوں کو لے کے چروا ہے 
apney galo ko le kar charwa hai

سرحدی بستیوں میں جا پہنچے 
sarhadi basityo mein ja pohanchey


دل ناکام! میں کہاں جاؤں؟ 
dil nakam main kaaha jao


اجنبی شام! میں کہاں جاؤں؟
ajanabi sham main kaha jao


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se