Bus Aik Andaza Hai By John Elia - بس ایک اندازہ




بس ایک اندازہ   
Bus Aik Andaza Hai By John Elia - بس ایک اندازہ

برس گزرے تمہیں سوئے ہوئے 
baras guzrey tumhey sowey hue

اٹھ جاؤ، سنتی ہو، اب اٹھ جاؤ 
uth jao sunti ho ab uth jao

میں آیا ہوں 
main aaya hoon

میں اندازے سے سمجھا ہوں 
mere anadazey sey samjha ho

یہاں سوئی ہوئی ہو تم 
yaha sowi hui ho tum

یہاں، روئے زمیں کے اس مقامِ آسمانی تر کی حد میں 
yaha roh e zameen k es maqam e asamani tar ki had mein

باد ہائے تُند نے 
baad haye tundney

میرے لئے بس ایک اندازہ ہی چھوڑا ہے
mere liye bus aik anadaza hi chora hai



Jaun Elia- جون ایلیا

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se