Dad Talab anjuman mein thi - رامش گروں سے داد طلب انجمن میں تھی


رامش گروں سے داد طلب انجمن میں تھی 

Dad Talab anjuman mein thi - رامش گروں سے داد طلب انجمن میں تھی

وہ حالت سکوت جو اس کے سخن میں تھی 



تھے دن عجب وہ کشمکش انتخاب کے 


اک بات یاسمیں میں تھی اک یاسمن میں تھی 


رم خوردگی میں اپنے غزال ختن تھے ہم 


یہ جب کا ذکر ہے کہ غزالہ ختم میں تھی 


محمل کے ساتھ ساتھ میں آ تو گیا مگر 


وہ بات شہر میں تو نہیں ہے جو بن میں تھی 


کیوں کہ سماعتوں کو خنک عیش کر گئی 


وہ تند شعلگی جو نوا کے بدن میں تھی 


خوباں کہاں تھے نکتہ خوبی سے با خبر 


یہ اہلِ فن کی بات تھی اور اہلِ فن میں تھی 


یاد آ رہی ہے پھر تری فرمائشِ سخن 


وہ نغمگی کہاں مری عرضِ سخن میں تھی 


آشوبناک تھی نگہِ اوّلینِ شوق 


صبحِ وصال کی سی تھکن اس بدن میں تھی 


پہنچی ہے جب ہماری تباہی کی داستاں 


عذرا وطن میں تھی نہ عنیزہ وطن میں تھی 


میں اور پاسِ وضعِ خرد، کیا ہوا مجھے؟ 


میری تو آن ہی مرے دیوانہ پن میں تھی 


انکار ہے تو قیمتِ انکار کچھ بھی ہو 


یزداں سے پوچھنا یہ ادا اہرمن میں تھی

Check this out

Youm E Pakistan By John Elia - یوم پاکستان کے موقع پر

Ramish garon se daad talabb anjuman mein thi


woh haalat sukut jo is ke sukhan mein thi


they din ajab woh kashmakash intikhab ke


ik baat yasmeen mein thi ik Yasmen mein thi


rim khordghi mein –apne Ghazaal Khitan they hum


yeh jab ka zikar hai ke Ghazaala khatam mein thi


mhml ke sath sath mein aa to gaya magar


woh baat shehar mein to nahi hai jo ban mein thi


kyun ke samaaton ko khank aish kar gayi


woh tund شعلگی jo nawa ke badan mein thi


Khuban kahan they nuqta khoobi se ba khabar


yeh ehley fun ki baat thi aur ehley fun mein thi


yaad aa rahi hai phir tri Farmaaish sukhan


woh naghmagi kahan meri arze sukhan mein thi


آشوبناک thi naghe awleen shoq


subh-e visale ki si thakan is badan mein thi


pohanchi hai jab hamari tabahi ki dastan


uzra watan mein thi nah عنیزہ watan mein thi


mein aur paas waza khiirad, kya sun-hwa mujhe ?


meri to aan hi maray deewana pan mein thi


inkaar hai to qimtِ inkaar kuch bhi ho



Yazdan se poochna yeh ada اہرمن mein thi

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se