Dawai By Jaun Elia - دوئی


دوئی 

Dawai By Jaun Elia - دوئی

بوئے خوش ہو، دمک رہی ہو تم 


رنگ ہو اور مہک رہی ہو تم 


بوئے خوش! خود کو رو برو تو کرو 


رنگ! تم مجھ سے گفتگو تو کرو 





وقت ہے لمحہ لمحہ مہجوری 


چاہے تم میری ہم نشیں بھی ہو 


ہے تمہاری مہک میں حزنِ خیال 


جیسے تم ہو بھی اور نہیں بھی ہو 





میرے سینے میں چُبھ رہا ہے وجود 


اور دل میں سوال سا کچھ ہے 


وقت مجھ کو نہ چھین لے مجھ سے 


سرخوشی میں ملال سا کچھ ہے 





میری جاں! ایک دوسرے کے لیے 


جانے ہم ناگزیر ہیں کہ نہیں 


تم جو ہو تم ہو! میں جو ہوں میں ہوں 


دل ہوا ہے سکوں پذیر کہیں




Jaun Elia


boye khush ho, damak rahi ho tum rang ho aur mehak rahi ho tum boye khush! khud ko ro baroo to karo rang! tum mujh se guftagu to karo waqt hai lamha lamha مہجوری mehjori chahay tum meri hum nashen bhi ho hai tumhaarii mehak mein hazan khayaal jaisay tum ho bhi aur nahi bhi ho mere seenay mein chubh raha hai wujood aur dil mein sawal sa kuch hai waqt mujh ko nah chean le mujh se sarkhushi mein malaal sa kuch hai meri jaan! aik dosray ke liye jany hum na guzeer hain ke nahi tum jo ho tum ho! mein jo hon mein hon dil hwa hai sakun Pazeer kahin

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se