اعلانِ رنگ - Elaan E Rang By John Elia


اعلانِ رنگ  
اعلانِ رنگ  - Elaan E Rang By John Elia

سفید پرچم، سفید پرچم 
sufaid parcham sufaid parcham

یہ ان کا پرچم تھا جو شکاگو کے چوک میں جمع ہو رہے تھے 
yeh en ka parcham tha jo chicago k choak mein jama ho rahe they

جو نرم لہجوں میں اپنی محرومیوں کی شدت سمو رہے تھے 
jo naram lahjoo mein apni marhomiyo ki shidat samo rahe they

کہ ہم بھی حقدارِ زندگیِ ہیں مگر دل افگارِ زندگی ہیں 
k hum bhi haqdar e zindagi hai magar dil afgaar e zindagi hai

ہمارے دل میں بھی کچھ امنگیں ہیں ہم بھی کچھ خواب دیکھتے ہیں 
humharey dil mein kuch umagien hai hum bhi kuch khwab dhektey hai

خوشی ہی آنکھیں نہیں سجاتی ہیں غم بھی کچھ خواب دیکھتے ہیں 
khushi  hui aankhien nehi sajati hai gham bhi kuch khwab dhektey hai

یکم مئی کی سحر نے جب اپنا نفسِ مضموں رقم کیا تھا 
yakam may ki sahr ney jab apna nafs e muzbon raqm kiya tha

بلا نصیبوں کو زندگی کی امنگ نے ہم قدم کیا تھا 
bhala naseebo ko zindagi ki umang ney hum qadam kiya tha

اور اک جریدہ نگارِِ صبحِ شعورِ محنت نے آج کے دن 
aur aik jaridah nigha r subha e shaur  mehant ney ajj ka din

بنامِ محنت کشاں یہ پیغامِ حق سپردِ قلم کیا تھا 
benaam e mehant kasha yeh pegham e haq superd qalam kiya tha

الم نصیبو بہادری سے ستم نصیبو بہادری سے 
alam naseebiyo bahadori sey sitm naseebiyo bahadori

صفوں کو اپنی درست کر لو کہ جنگ آغاز ہو چکی ہے 
safoo ko apni durst karlo jung ka aghaz ho cuka hai

تمہارے کتنے ہی باہنر ہاتھ ہیں جو بےروزگار ہیں آج 
tumhrey kitney hi baa huner hath hai jo be rozgar hai ajj

تمہارے کتنے نڈھال ڈھانچے گھروں میں بے انتظار ہیں آج 
tumhrey kitney nidhal dhaanchey gharo mein be intizar hai ajj

نظامِ دولت کے پنجہ ہاے درشت و خونیں شروع ہی سے 
nizam e dolat ka panja haye darsht wa khoonein shuru hi sey

فریبِ قانون و امن کی آڑ میں چھپے ہیں ، چھپے رہے ہیں 
fareeb qanoon e aman ki aar mein chupey hai chupey rahe hai

گروہِ محنت کشاں ہو تیری زبان پر اب بس ایک نعرہ 
giro mehant kasha ho teri zaban per ab bus aik nara 

مفاہمت ختم ہو چکی ہے ، مفاہمت ختم ہو چکی ہے 
mafa himat khatam ho cuki hai mafa himat khatam ho cuki hai

ستمگروں سے ستم کشوں کی معاملت ختم ہو چکی ہے 
sitam giro sey sitam kishon ki mae miln khtam ho cuki hai

یکم مئی کا حسابِ عظمت تو آنے والے ہی کر سکیں گے 
yakam mayi ka hisab azmat toh aney wale hi kar sakien gai

ہجوم گنجان ہو گیا تھا عمل کا اعلان ہو گیا تھا 
hujoom gunjaan ho gaya tha amal ka alaan ho gaya tha

تمام محرومیاں ہم آواز ہو گئیں تھیں کہ ہم یہاں ہیں 
tum merho miya hum awaz ho gai thi k hum yaha hai

ہمارے سینوں میں ہیں خراشیں ہمارے جسموں پہ دھجیاں ہیں 
humharey sapno mein hai kharaasien humhrey jismo pey dasjiya hai

ہمیں مشینوں کا رزق ٹھہرا کے رزق چھینا گیا ہمارا 
humhey machino ka rizq tahra k rizq chupa gaya humhara

ہماری بخشش پہ پلنے والو ہمارا حصہ تباہیاں ہیں 
humhri bakhsish pay palney walo humhara hisa tabehiya hai

مگر یہ اک خواب تھا وہ اک خواب جس کی تعبیر خونچکاں تھی 
magar yeh aik khwab tha woh aik khwab tha jis ki tabeer khoonchakah thi

رقم جو کی تھی قلم نے سرمایے کے وہ تحریر خونچکاں تھی 
raqm jo ki thi qalam ney sarmaye k woh tahreer khoonchakah thi

سفید پرچم نے خونِ محنت کو اپنے سینے پہ مل لیا تھا 
sufaid percham ney khoon e mehant ko apney seeney pee mal liya tha

یہ وقت کی سربلند تدبیر تھی یہ تدبیر خونچکاں تھی 
yeh waqt ki sar buland tabeer thi yeh tabeer khoonchakha thi

دیارِ تاریخ کی فضائوں میں سرخ پرچم ابھر رہا تھا 
diyaar  e tareeq ki fizao mein surq percham ubhar  raha tha

یہ زندگی کی جلیل تنویر تھی یہ تنویر خونچکاں تھی 
yeh zindagi ki jaleel tanveer thi yeh tanveer khoonchakha thi

یکم مئی خون شدہ امنگوں کی حق طلب برہمی کا دن ہے 
yakam mayi khoon shuda umango ki haq talab barhami ka din hai

یکم مئی زندگی کے زخموں کی سرخرو شاعری کا دن ہے 
yakam mayi zindagi ka zakhmo ki sarkhuru  wa shayari ka din hai

یکم مئی اپنے خونِ ناحق کی سرخ پیغمبری کا دن ہے 
yakam may apney khoon na haq ki surq paghambari ka din hai

یکم مئی زندگی کا اعلانِ رنگ ہے زندگی کا دن ہے 
yakam mayi zindagi ka alan e rang hai zindagi ka din hai

یہ زندگی خون کا سفر ہے اور ابتلا اس کی رہگزر ہے 
yeh zindagi khoon ka safar hai aur abtala ki rahguzr hai

جو خون اس سیلِ خون کی موجوں کو تند کر دے وہ نامور ہے 
jo khoon es seal khoon ki mojoo ki tand kar day woh naamor hai

یہ خون ہے خون سر زندہ یہ خونِ زندہ ہے خونِ زندہ 
yeh khoon hi khoon sar zindagi yeh khoon zinda hai khoon e zinda

وہ خون پرچم فراز ہوگا جو خونِ زندہ کا ہمسفر ہے 
woh khoon percham faraz ho ga jo khoon e zinda ka humsfar hai

یہ خوں ہے سرنام یعنی سرنامئہ کتابِ امم یہ خوں ہے 
yeh khoo hai sar naam yahni sar nama e kitab e ammm yeh khoo hai

ادب گہِ اجتہادِ تاریخ میں نصابِ امم یہ خوں ہے 
adab gah ajtihaad e tareeq mein nisab e amm yeh khoo hai

صلیبِ اعلانِ حرفِ حق کا خطیب بھی یہ خطاب بھی یہ 
saleeb e alan hurf e haq ka khateeb bhi yeh khitab bhi yeh

یہ اپنا ناشر ہے اور منشورِ انقلابِ امم یہ خوں ہے 
yeh apna naashir hai aur manshur e inkilab amm yeh khoo hai

یہ خون ہی خیرِ جسم و جاں ہے اس امتحاں گاہِ زندگی میں 
yeh khoon hi khair jism wa jaan hai es imtihan ga e zindagi mein

جہاں کہیں ظلم طعنہ زن ہو وہاں جوابِ امم یہ خوں ہے 
jaha kahi zulm taena zan ho waha jo ab amm yeh khoo hai

یہ خون ہی خواب دیکھتا ہےشکست کی شب بھی ، صبحِ نو کے 
yeh khoon hi khwab dhekta hai sikast ki shab bhi subha noor ki

پھر اپنی ہی گردشوں میں تعبیر کوشِ خوابِ امم یہ خوں ہے 
phir apni hi gardisho mein tabeer kosh khwab e amm yeh khoo hai

یہ خوں اٹھاتا ہے غاصبوں کے خلاف طوفاں بغاواتوں کے 
yeh khoo uthata hai ghaasibo k kilaf taufan bagawato k

ہوں عام جب زندگی کی خوشیاں تو آب و تابِ امم یہ خوں ہے 
ho aam jab zindagi ki khawishe toh ab e tab amm yeh khoo hai

جو ظلم سے دو بدو ہیں ان کی صفوں کو قوت پلائو، آئو 
jo zulm do bado haien ki safo ki qoot palao aoo

اسی طرح خونِ زندہءِ ہر زماں، جہاں اقتدار ہوگا 
esi tarha khoon e zinda  har zamana jaha iqtidar ho ga

نفاق اور افتراق ہی میں پناہ لیتے رہے ہیں ظالم 
nafaq aur iftiraaqq hi  mein pana letey rahe hai zalim

جو ظالموں کو پناہ دے گا وہ ظالموں میں شمار ہوگا
jo zulmo ko pana da ga woh zalimo mein shumar ho ga

Jaun Elia


Taken from John Elia
 John Elia poetry shayad - شاید

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se