John Elia poetry shayad - شاید


شاید   

John Elia poetry shayad - شاید


میں شاید تم کو یکسر بھولنے والا ہوں 
main sayad tum ko yaksar bhoolney wala hoon

شاید، جانِ جاں شاید 
sayad jaan e jaaa sayad

کہ اب تم مجھ کو پہلے سے زیادہ یاد آتی ہو 
k ab tum majh ko pehle sey ziyda yaad ati hoo

ہے دل غمگیں، بہت غمگیں 
hai dil ghamgeen bohat ghamgeen

کہ اب تم یاد دل وارانہ آتی ہو 
k ab tum yaad dil virana ati ho

شمیم دور ماندہ ہو 
samim door maandha ho

بہت رنجیدہ ہو مجھ سے 
bohat ranjida hoo majh sey

مگر پھر بھی 
magar phir bhi

مشامِ جاں میں میرے آشتی مندانہ آتی ہو 
mashaam e jaaan main mere aashaati mandana ati hoo

جدائی میں بلا کا التفاتِ محرمانہ ہے 
judai mein bala ka altifati mehrmaana hai

قیامت کی خبر گیری ہے 
qayamat ki kabar ghairi hai

بےحد ناز برداری کا عالم ہے 
be had naan bardari ka alaam hai

تمہارے رنگ مجھ میں اور گہرے ہوتے جاتے ہیں 
tumhrey raang majh mein aur gahrey hotey jatey hai

میں ڈرتا ہوں 
main darta ho

میرے احساس کے اس خواب کا انجام کیا ہوگا 
mere ehsaas ka es khwab ka anjaam kia ho gaa

یہ میرے اندرونِ ذات کے تاراج گر 
yeh mere androoni zaat ka taaraaj gar

جذبوں کے بیری وقت کی سازش نہ ہو کوئی 
jazbu k bairy waqt ki saazish na ho kio

تمہارے اس طرح ہر لمحہ یاد آنے سے 
tumhrey es tarha har lamha yaad aney sey

دل سہما ہوا سا ہے 
dil sehma hua saa hai

تو پھر تم کم ہی یاد آؤ 
tu phir tum kam hi yaad ao

متاعِ دل، متاعِ جاں تو پھر تم کم ہی یاد آؤ 
matay e dil mataye jaan tu phir tum kam hi yaad aooo

بہت کچھ بہہ گیا ہے سیلِ ماہ و سال میں اب تک 
bohat kuch bah gaya hai sael e maa wa saal mein ab tak

سبھی کچھ تو نہ بہہ جائے 
sabhi kuch tu na bah jaye

کہ میرے پاس رہ بھی کیا گیا ہے 
k mere pass rah bhi kiya gaya hai

کچھ تو رہ جائے 
kuch toh rah jaye


Urdu Shayari Written By Jaun Elia

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se