Nawai Duruni By Jaun - نوائے درونی


 Nawai Duruni By Jaun - نوائے درونی


نوائے درونی 





نیلگوں حُزن کے اکناف میں گم ہوتے ہوئے 

 neiligo khizun k aknaaf mein ghum hotey hue
مہرباں یاد کے اطراف میں گم ہوتے ہوئے 
mehbaa k atraaf mein ghum hotey hue

بے طرف شام کے ابہام کی سرسبزی میں 
be taraf  shaam k ahbahaam ki sar sabzi mein

جو تنفس سے خموشی کے سنا یے میں نے 
 jo tunfs mein kmoshi sunaye maine ney


ایسا نغمہ کسی آواز کے جنگل میں نہیں
aisa nagma kisi ki awaz k jungle mein nehi

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se