shahar e ashoob - شہرِ آشوب


شہرِ آشوب  
shahar e ashoob - شہرِ آشوب






گزر گئے پسِ در کی اشارتوں کے وہ دن 


کہ رقص کرتے تھے مے خوار رنگ کھیلتے تھے 


نہ محتسب کی تھی پروا نہ شہرِ دار کی تھی 


ہم اہلِ دل سرِ بازار رنگ کھیلتے تھے 


غرورِ جبہ و دستار کا زمانہ ہے 


نشاطِ فکر و بساطِ ہنر ہوئی برباد 


فقیہ و مفتی و واعظ پہ حرف گیر ہو کون؟ 


یہ ہیں ملائکہ اور شہر جنتِ شداد 


ملازمانِ حرم نے وہ تنگیاں کی ہیں 


فضائیں ہی نہ رہیں رقصِ رنگ و بو کے لیے 


یہ انتظام تو دیکھو خزاں پرستوں کا 


بچھائی جاتی ہیں سنگینیاں نمو کے لیے 

اسی ہوس میں ہیں ہر دم یہ دشمنانِ جمال 


جو سوئے رنگ اٹھے اس نظر کو گُل کر دیں 


جو بس چلے کہیں ان کا تو یہ فضا بیزار 


شفق کا رنگ بجھا دیں سحر کو گُل کر دیں 


ہوئی ہے جانبِ محراب سے وہ بارشِ سنگ 


کہ عافیت خمِ ابرو کی ہے بہت دشوار 


ستم کیا ہے عجب منجنیقِ منبر نے 


حریمِ دل کی سلامت نہیں رہی دیوار 


یہ عہد وہ ہے کہ دانشورانِ عہد پہ بھی 


منافقت کی شبیہوں کا خوف طاری ہے 


نمازِ خوف کے دن ہیں کہ ان دنوں یارو 


قلندروں پہ فقیہوں کا خوف طاری ہے 


یہ ہیں وہ تیرہ دلانِ قلمروِ تاریخ 


جو روشنائی ءِ دانش کا خون کرتے رہے 


یہی تو ہیں جو حکیموں کی حکمتوں کے خلاف 


ہر اک دور میں حاکم کے کان بھرتے رہے 


ہیں ظلمتوں کی مربی طبیعتیں ان کی 


کبھی یہ روشنیِ طبع کو نہیں مانے 


ہے روشنی کا انہیں ایک ہی نظارہ پسند 


کہ جشنِ فتح منے اور جلیں کتب خانے 


دیا ہے کام انہیں شب کے سر پرستوں نے 


سپیدہِ سحری کو سیاہ کرنے کا 


ملا ہے عہدہ کلیسائے عرب سے ان کو 


شعورِ مشرقِ نو کو تباہ کرنے کا 


گزشتہ عہد گزرنے ہی میں نہیں آتا 


یہ حادثہ بھی لکھو معجزوں کے خانے میں 


جو رد ہوئے تھے جہاں میں کئی صدی پہلے 


وہ لوگ ہم پہ مسلط ہیں اس زمانے میں

Jaun Elia- جون ایلیا

guzar gaye pass dar ki ishaaraton ke woh din

ke raqs karte they me khawar rang khailtay they

nah Muhtasib ki thi parwa nah shehr-e daar ki thi

hum ehley dil sar-e bazaar rang khailtay they

ghuroor jubba o dastaar ka zamana hai

nshatِ fikar o bsatِ hunar hui barbaad

fiqiya o mufti o waiz pay harf geer ho kon ?

yeh hain mulaika aur shehar janat-e Shadad

mulizmaanملازمان haram naay woh تنگیاں tangiyaa ki hain

fizayen hi nah rahen Raqs rang o bo ke liye

yeh intizam to dekho khizaa paraston ka

bichai jati hain سنگینیاں sangeniya numoo ke liye

isi hawas mein hain har dam yeh dshmnan jamal

jo soye rang utthay is nazar ko gُl kar den

jo bas chalay kahin un ka to yeh fiza bezaar

shafaq ka rang bujha den sehar ko gُl kar den

hui hai janib maharab se woh Barish sang

ke aafiat khham abrow ki hai bohat dushwaar

sitam kya hai ajab Manjneeq minbar naay

hareem dil ki salamat nahi rahi deewar

yeh ehad woh hai ke دانشوران daanishwaran ehad pay bhi

munafqat ki shbihon ka khauf taari hai

namaz-e khauf ke din hain ke un dinon yaroo

qlndron pay fqihon ka khauf taari hai

yeh hain woh terah dlanِ قلمرو qalamar e tareekh

jo roshnaye hamza Danish ka khoon karte rahay

yahi to hain jo hakeemon ki hikmaton ke khilaaf

har ik daur mein haakim ke kaan bhartay rahay


hain zulmaton ki Murabbi طبیعتیں tabiyatien un ki

kabhi yeh Roshni taba ko nahi manay


hai roshni ka inhen aik hi nzarah pasand


ke jashne fatah Munnay aur jlin kutub khanaay


diya hai kaam inhen shab ke sir paraston naay


spadahسپیدہ sehri ko siyah karne ka


mila hai ohda kalisaye arab se un ko

Shaoor mshrqِ no ko tabah karne ka

guzashta ehad guzarnay hi mein nahi aata


yeh haadsa bhi likho majzon ke khanaay mein


jo radd hue they jahan mein kayi sadi pehlay

woh log hum pay musallat hain is zamane mein

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se