ae hamaliya ae Faseel kishwar hndostan


Allama Iqbal Poetry In Urdu

ہمالہ


اے ہمالہ! اے فصیل کشور ہندوستاں

چومتا ہے تیری پیشانی کو جھک کر آسماں


تجھ میں کچھ پیدا نہیں دیرینہ روزی کے نشاں


تو جواں ہے گردش شام و سحر کے درمیاں 


ایک جلوہ تھا کلیم طور سینا کے لیے


تو تجلی ہے سراپا چشم بینا کے لیے


امتحان دیدئہ ظاہر میں کوہستاں ہے تو


پاسباں اپنا ہے تو، دیوار ہندستاں ہے تو


مطلع اول فلک جس کا ہو وہ دیواں ہے تو


سوئے خلوت گاہ دل دامن کش انساں ہے تو


برف نے باندھی ہے دستار فضیلت تیرے سر


خندہ زن ہے جو کلاہ مہر عالم تاب پر


تیری عمر رفتہ کی اک آن ہے عہد کہن


وادیوں میں ہیں تری کالی گھٹائیں خیمہ زن


چوٹیاں تیری ثریا سے ہیں سرگرم سخن


تو زمیں پر اور پہنائے فلک تیرا وطن


چشمہ دامن ترا ئنہ سےال ہے


دامن موج ہوا جس کے لیے رومال ہے


ابر کے ہاتھوں میں رہوار ہوا کے واسطے


تازیانہ دے دیا برق سر کہسار نے


اے ہمالہ کوئی بازی گاہ ہے تو بھی، جسے


دست قدرت نے بنایا ہے عناصر کے لیے


ہائے کیا فرط طرب میں جھومتا جاتا ہے ابر


فیل بے زنجیر کی صورت اڑا جاتا ہے ابر


جنبش موج نسیم صبح گہوارہ بنی


جھومتی ہے نشہ ہستی میں ہر گل کی کلی


یوں زبان برگ سے گویا ہے اس کی خامشی


دست گلچیں کی جھٹک میں نے نہیں دیکھی کبھی


کہہ رہی ہے میری خاموشی ہی افسانہ مرا


کنج خلوت خانہ قدرت ہے کاشانہ مرا


آتی ہے ندی فراز کوہ سے گاتی ہوئی


کوثر و تسنیم کی موجوں کی شرماتی ہوئی


آئنہ سا شاہد قدرت کو دکھلاتی ہوئی


سنگ رہ سے گاہ بچتی، گاہ ٹکراتی ہوئی


چھیڑتی جا اس عراق دل نشیں کے ساز کو


اے مسافر دل سمجھتا ہے تری آواز کو


لیلی شب کھولتی ہے آ کے جب زلف رسا


دامن دل کھینچتی ہے آبشاروں کی صدا


وہ خموشی شام کی جس پر تکلم ہو فدا


وہ درختوں پر تفکر کا سماں چھایا ہوا


کانپتا پھرتا ہے کیا رنگ شفق کہسار پر


خوشنما لگتا ہے یہ غازہ ترے رخسار پر


اے ہمالہ! داستاں اس وقت کی کوئی سنا


مسکن آبائے انساں جب بنا دامن ترا


کچھ بتا اس سیدھی سادی زندگی کا ماجرا


داغ جس پر غازئہ رنگ تکلف کا نہ تھا


ہاں دکھا دے اے تصور!پھر وہ صبح و شام تو


دوڑ پیچھے کی طرف اے گردش ایام تو




Allama iqbal poetry in urdu roman


ہمالہ
Hamaliya



ae hamaliya ae Faseel kishwar hndostan
choomta hai teri peshani ko jhuk kar aasmaa


tujh mein kuch peda nahi darina rozi ke nshan
to jawaa hai gardish shaam o sehar ke darmia


aik jalva tha claim tor seena ke liye
to tajallii hai saraapaa chasham Beena ke liye


imthehaan دیدئہ zahir mein کوہستاں hai to

پاسباں apna hai to, deewar ہندستاں hai to


mutala awwal fallak jis ka ho woh devan hai to
soye khalwat gaah dil daman kash ansan hai to



barf ne baandhi hai dastaar fazeelat tairay sir
Khanda zan hai jo kullah mohar aalam taab par



teri Umar rafta ki ik aan hai ehad kehan
waadiyon mein hain tri kaali ghatayeen khaima zan


chotiyan teri Surriya se hain sargaram sukhan
to zamee par aur pahnaye fallak tera watan



chashma daman tra ئنہ se al hai
daman mouj sun-hwa jis ke liye romal hai


abr ke hathon mein رہوار sun-hwa ke wastay
taizana day diya barq-e sir kuhsaar ne


ae ہمالہ koi baazi gaah hai to bhi, jisay
dast qudrat ne banaya hai anasir ke liye


haae kya fart Tarb mein jhoomta jata hai abr
feel be zanjeer ki soorat ura jata hai abr


junbish mouj Naseem subah gehwaara bani
jhoomti hai nasha hasti mein har Gul ki kalie

yun zabaan barg se goya hai is ki khamshi
dast Gulcheen ki jhatak mein ne nahi dekhi kabhi



keh rahi hai meri khamoshi hi afsana mra
kunj khalwat khanah qudrat hai kashanh mra


aati hai nadi frazz koh se gaati hui

kusar o Tasneem ki moajoon ki sharamati hui


aaynh sa Shahid qudrat ko dikhlaati hui

sang reh se gaah bachte, gaah takrata hui


chedti ja is Iraq dil nashen ke saaz ko

ae musafir dil samjhta hai tri aawaz ko


laila shab kholti hai aa ke jab zulff rasa

daman dil khainchti hai absharoon ki sada



woh khmoshi shaam ki jis par takalum ho fida

woh darakhton par tafakkar ka samaa chaaya sun-hwa




kanpta phirta hai kya rang shafaq kuhsaar par

khushnuma lagta hai yeh Ghazah tre rukhsaar par


ae ہمالہ! dastan is waqt ki koi suna

maskan آبائے ansan jab bana daman tra


kuch bta is seedhi saadi zindagi ka maajra

daagh jis par غازئہ rang takalouf ka nah tha



haan dikha day ae tasawwur! phir woh subah o shaam to

daud peechay ki taraf ae gardish ayyaam to


Explain In Urdu With English Translation


ہمالہ

ae hamaliya ae Faseel kishwar hndostan




اے ہمالہ! اے فصیل کشور ہندوستاں

چومتا ہے تیری پیشانی کو جھک کر آسماں



HIMALAYA


O Himalaya! O rampart of the realm of India!
Bowing down, the sky kisses your forehead.





تجھ میں کچھ پیدا نہیں دیرینہ روزی کے نشاں
تو جواں ہے گردش شام و سحر کے درمیاں 


Meaning
دیرینہ روزی: لمبی عمر۔



Your condition does not show any signs of old age;
you are young in the midst of day and night's alternation*.


Explanation
The alternation of the day and night is what produces time. This verse also alludes to the relative recentness of the Himalayas in terms of geological ages. This range came into existence 5-10 million years ago in the Pliocene epoch.




ایک جلوہ تھا کلیم طور سینا کے لیے

تو تجلی ہے سراپا چشم بینا کے لیے




Meaning
چشم بینا: دیکھنے والی آنکھ۔


The Kalim of Toor-e-Seina witnessed but

one Effulgence for the discerning eye

you are an embodiment of Effulgence.




امتحان دیدئہ ظاہر میں کوہستاں ہے تو

پاسباں اپنا ہے تو، دیوار ہندستاں ہے تو



Meaning
دیدئہ: آنکھ۔


To the outward eye you are a mere mountain range;

in reality you are our sentinel, you are India's rampart.


مطلع اول فلک جس کا ہو وہ دیواں ہے تو

سوئے خلوت گاہ دل دامن کش انساں ہے تو




Meaning
دامن کش: دامن کھینچنے والا۔


You are the diwan whose opening verse is the sky. 
You lead Man to the solitudes of his heart's retreat.


برف نے باندھی ہے دستار فضیلت تیرے سر

خندہ زن ہے جو کلاہ مہر عالم تاب پر




Meaning
دستار فضیلت: برتری کی پگڑی۔


کلاہ مہر عالم تاب: دنیا کو روشن کرنے والے سورج کی ٹوپی۔

Snow has endowed you with the turban of honour* 
which scoffs at the crown of the world-illuminating sun.


Explanation

* The successful completion of education in the institutions of higher learning in the Muslim world culminates in a turban being conferred on the scholar as an insignia of his academic degree. It corresponds with the cap and academic hood in the Western world.
\
تیری عمر رفتہ کی اک آن ہے عہد کہن

وادیوں میں ہیں تری کالی گھٹائیں خیمہ زن




Antiquity is but a moment of your bygone age; 
dark clouds are encamped in your valleys.


چوٹیاں تیری ثریا سے ہیں سرگرم سخن

تو زمیں پر اور پہنائے فلک تیرا وطن



Meaning
ثریا: دو ستارے جو بہت دور ہیں۔


پہنائے فلک: آسمان کی وسعت۔

Your peaks are matching with the Pleiades in elegance; 
though you are standing on earth your abode is sky's expanse.


چشمہ دامن ترا ئنہ سےال ہے

دامن موج ہوا جس کے لیے رومال ہے


Meaning
ا ئنہ سیال: بہنے والا؛ رواں۔


The stream in your flank is a fast flowing mirror, 
for which the breeze is working like a kerchief.


ابر کے ہاتھوں میں رہوار ہوا کے واسطے

تازیانہ دے دیا برق سر کہسار نے



Meaning
کوڑا۔ تازیانہ

رہوار ہوا: ہوا کا گھوڑا۔

The mountain top's lightning has given 
a whip in the hands of cloud for the ambling horse.


اے ہمالہ کوئی بازی گاہ ہے تو بھی، جسے

دست قدرت نے بنایا ہے عناصر کے لیے




Meaning
بازی گاہ: کھیل کی جگہ، کھیل کا میدان۔

O Himalah! Are you like a theater stage 
which nature's hand has made for its elements?


ہائے کیا فرط طرب میں جھومتا جاتا ہے ابر

فیل بے زنجیر کی صورت اڑا جاتا ہے ابر



Meaning
فیل: ہاتھی۔

فرط طرب میں: بے حد خوشی میں۔

Ah! How the cloud is swaying in excessive joy; 
the cloud like an unchained elephant is speeding.


جنبش موج نسیم صبح گہوارہ بنی

جھومتی ہے نشہ ہستی میں ہر گل کی کلی


Meaning
موج نسیم جنبش : ہوا کی لہر کی رواانی۔

گہوارہ: جھولا۔


Gentle movement of the morning zephyr is acting like a cradle; 
every flower bud is swinging with intoxication of existence.


یوں زبان برگ سے گویا ہے اس کی خامشی

دست گلچیں کی جھٹک میں نے نہیں دیکھی کبھی



Meaning
برگ: پتّہ۔

دست گلچیں: پھول چننے والے ہاتھ۔


The flower bud's silence with the petal's tongue is saying 
‘I have never experienced the jerk of the florist's hand.


کہہ رہی ہے میری خاموشی ہی افسانہ مرا

کنج خلوت خانہ قدرت ہے کاشانہ مرا




Meaning
کاشانہ: ٹھکانہ، گھر۔

Silence itself is relating the tale of mine; 
the corner of nature's solitude is the abode of mine’.


آتی ہے ندی فراز کوہ سے گاتی ہوئی

کوثر و تسنیم کی موجوں کی شرماتی ہوئی




Meaning
فراز کوہ: پہاڑ کی بلندی۔

The brook is melodiously descending from the high land putting the waves of Kawthar* and Tasnâm* to embarrassment.

* Kawthar and Tasnâm: They are two fountains in Paradise. The name includes their streams also.



آئنہ سا شاہد قدرت کو دکھلاتی ہوئی

سنگ رہ سے گاہ بچتی، گاہ ٹکراتی ہوئی




Meaning
شاہد قدرت: قدرت کی خوبصورتی؛ مراد ہے معشوق۔


As if showing the mirror to Nature's beauty; 
now evading now rowing against the rock in its way.


چھیڑتی جا اس عراق دل نشیں کے ساز کو

اے مسافر دل سمجھتا ہے تری آواز کو




Meaning
عراق: موسیقی کا ایک راگ۔


Play in passing this orchestra of beautiful music 
O wayfarer! The heart comprehends your music.


لیلی شب کھولتی ہے آ کے جب زلف رسا

دامن دل کھینچتی ہے آبشاروں کی صدا




When the night's Lailah unfurls her long hair; 
the sound of water-falls allures the heart.


وہ خموشی شام کی جس پر تکلم ہو فدا

وہ درختوں پر تفکر کا سماں چھایا ہوا



Meaning
تکلم: گفتگو۔

That silence of the night whose beauty surpasses speech. 
That state of silent meditation overshadowing the trees.


کانپتا پھرتا ہے کیا رنگ شفق کہسار پر

خوشنما لگتا ہے یہ غازہ ترے رخسار پر



meaning
غازہ: چہرے پر استعمال کا پوڈر۔


That dusk's beauty which shivers along the mountain range; 
very beautiful looks this rouge on your cheeks.


اے ہمالہ! داستاں اس وقت کی کوئی سنا

مسکن آبائے انساں جب بنا دامن ترا



Meaning
مسکن: رہنے کی جگہ۔

آبائے انساں: انسان کے باپ دادا۔

O Himalah! Do relate to us some stories of the time 
when your valleys became abode of Man's ancestors*.



Explanation
* This refers to the antiquity of the Himalayas in archaeological times. Kashmir was an inhabited area at the time of the Indus Valley civilization in the third millennium B.C. It also alludes to the tradition that the Hindu sages wrote the Vedas in the Himalayas under the inspiration of its beauty.

کچھ بتا اس سیدھی سادی زندگی کا ماجرا

داغ جس پر غازئہ رنگ تکلف کا نہ تھا


Relate something of the life without sophistication 
which had not been stained by the rouge of sophistication.


ہاں دکھا دے اے تصور!پھر وہ صبح و شام تو

دوڑ پیچھے کی طرف اے گردش ایام تو



O Imagination! Bring back that period 
O Vicissitudes of Time speed backwards*.


Explanation
* This is an outpouring of the poet's heart in which he yearns for the revival of the Islamic civilization, of which the Asian civilization was a precursor and a part.


(Translated by Dr M A K Khalil)

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se