Afasana Saaz By Jaun Elia - افسانہ ساز جس کا فراق و وصال تھا


Afasana Saaz By Jaun Elia - افسانہ ساز جس کا فراق و وصال تھا
افسانہ ساز جس کا فراق و وصال تھا

شاید وہ میرا خواب تھا شاید خیال تھا


یادش بخیر زخمِ تمنا کی فصلِ رنگ

بعد اس کے ہم تھے اور غمِ اندمال تھا

دشتِ گُماں میں ناقہ ء لیلی تھا گرم خیز 

شہرِ زیاں میں قیس اسیرِ عیال تھا 

خونِ جگر کھپا کے مصور نے یک نظر 

دیکھا تو اک مُرقعِ بے خدوخال تھا

کل شورِ عرض گاہِ سوال و جواب میں

جو بھی خموش تھا وہ عجب باکمال تھا

ہم ایک بے گزشتِ زمانہ زمانے میں

تھے حال مستِ حال جو ہر دم بحال تھا 

پُرحال تھا وہ شب میرے آغوش میں مگر 

اُس حال میں بھی اُس کا تقرب محال تھا 

تھا مست اُس کے ناف پیالے کا میرا دل 

اُس لب کی آرزو میں میرا رنگ لال تھا 

اُس کے عروج کی تھی بہت آرزو ہمیں 

جس کے عروج ہی میں ہمارا زوال تھا 

اب کیا حسابِ رفتہ و آئیندہ ء گُماں 

اک لمحہ تھا جو روز و شب و ماہ و سال تھا

کل ایک قصرِ عیش میں بزمِ سُخن تھی جون 

جو کچھ بھی تھا وہاں وہ غریبوں کا مال تھا


Check this out

here are in roman urdu


afsana saaz jis ka faraaq o visale tha




shayad woh mera khawab tha shayad khayaal tha





yadsh bakhair zakham tamanna ki fasal rang





baad is ke hum they aur gham e indimaal tha





dast-e guman mein naqa hamza laila tha garam khaiz





shehr-e zayan mein Qais Aseer Ayal tha





khon-e jigar کھپا ke musawir ne yak nazar





dekha to ik muraqa be khadd-o-khaal tha






kal shore arz gahِ sawal o jawab mein






jo bhi khmosh tha woh ajab bakmal tha





hum aik be gazasht zamana zamane mein




they haal Mast haal jo har dam bahaal tha





پرحال tha woh shab mere agosh mein magar





uss haal mein bhi uss ka taqarab mahaal tha





tha mast uss ke naaf pyaale ka mera dil





uss lab ki arzoo mein mera rang laal tha





uss ke urooj ki thi bohat arzoo hamein






jis ke urooj hi mein hamara zawaal tha





ab kya hisaab rafta o aa’indaa hamza guman





ik lamha tha jo roz o shab o mah o saal tha






kal aik qsrِ aish mein bzmِ Sukhan thi June







jo kuch bhi tha wahan woh ghareebon ka maal tha



ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se