Ay khuda ay khudaya - اے خدا، اے خدایاں خدا، اے خداوند


رمزِ ہمیشہ 
Ay khuda ay khudaya - اے خدا، اے خدایاں خدا، اے خداوند
اے خدا، اے خدایاں خدا، اے خداوند 


میں تجھ سے معمور تھا 


خود سے مسحور تھا 


اور ایک میں ہی کیا 


نیلگوں آسمانوں سے دیوان خانے کی 


سرسبز 


نکہت نفس 


کیاریوں تک کا سارا سماں 


تجھ سے معمور تھا 


خود سے مسحور تھا 


شہر میں معجزوں اور موسم کے میووں کی بہتات تھی 


اور میووںکی چاہے کسی فصل میں 


کچھ بھی کمی ہوئی ہو 


مگر معجزے روز افزوں تھے 


ایمان کا ابرِ باذل 


دلوں کی زراعت کو شاداب رکھتا تھا 


شام و سحر اپنے مرموز آغاز و انجام کے 


حسن میں 


محو رہتے تھے 


وہ دور اپنے تحیر کی خر سند حالت میں 


اور اپنے ابہام کی دست و دل باز سمتوں کے 


پندارہ پرور مرامیز کی ہر علامت میں 


اک خواب کا خواب تھا 


خواب کی روبروئی تھی 


اور چار سوئی تھی 


ہم خواب تھے اور خوابوں میں مشغول تھے 






ایک دن 


شہر کے ایک شیوا بیاں اور خوش لہجہ نثار 


دیوان خانے میں تشریف لائے 


جہاں ابنِ سکیت کا 


تذکرہ ہو رہا تھا 


ذرا دیر کے بعد 


اس تذکرے کے تسلسل مین وقفہ سا پیدا ہوا 


پس وہ بابا کی جانب نظر کر کے گویا ہوئے 


آپ حضرات نے آج کا معجزہ سن لیا؟ 


ان پہ اک حالت گریہ طاری تھی 


پھر وہ گلوگیر آواز میں 


ساری روداد اس معجزے کی سنانے لگے 


جو عزا خانہ شاہ مسکین میں 


دیکھ کر آئے تھے 



مجھ کو ان کا بیاں آج بھی یاد ہے 


اک جواںحالت جاںکنی میں 


ضریح مقدس کے محضر میں لایا گیا 


اور اس کے علم کے پھریرے کی 


انفاس پرور ہوا دی گئی 


اور پھر یہ ہوا 


وہ جواں اس طرح چونک اٹھا 


جیسے اب تک وہ سویا ہوا تھا 


مگر اب کسی کے جگانے سے 


یک بارگی جاگ اٹھا ہے 



اسے اک نئی زندگی مل گئی تھی 


وہاں کوئی بھی شخص ایسا نہیں تھا 


جسے اس پہ حیرت ہوئی ہو 


کہ یہ بات تو 


چھوٹے حضرت کے صدقے میں ہونی ہی تھی 



وہ خجستہ وہ خوش ماجرا روز و شب 


روز و شب ہی نہ تھے 


اک زمانِ الوہی کا انعام جاری تھے 


اور ایک رمزِ ہمیشہ کا 


سرچشمہ جاوداں تھے 


وہ سر چشمہ جاوداں جس کی تاثیر سے 


اپنا احساسِ ذات ایک الہام تھا 


جس سے روحِ در و بام سرشار تھی 


اس فضا میں کوئی شے فقط شے نہ تھی 



ایک معنی تھی 


معنی کا فیضان تھی 


کتنا شفاف تھا روح کا آسماں 


کتنی شاداب تھی آگہی کی زمیں 




ہم کو اپنا نسب نامہ تا آدمِ بوالبشر یاد تھا 


قبلِ تاریخ کی ساری تاریخ ذہنوںمیں محفوض تھی 


ہم کو صبحِ تخستینِ ایجاد سے 


اپنے اجداد تک 


اپنے دالان و در 


ان کی بنیاد تک 


ساری تفصیلِ کون و مکاں یاد تھی 


ہم سب اپنے یقین و گماں کے فرحناک 


اسرار میں 


شاد و خرم تھے 


خوش بین و خرسند تھے 


اے خداوند! میں تجھ سے معمور تھا 


اور پھر 


عقل انگیزہ جو درمیاں آگئی اے 


خدا ایک سفاک پرخاش و پیکار تھی 


جو مرے اور مرے درمیاں چھڑ گئی تھی 


مرے زہن میں نا سزا ،جاں گزا آگہی کا جہنم بھڑکنے لگا 


اور پھر 


وہ زمانہ بھی آیا کہ جب 


میں ترے باب میں مضمحل ہوگیا 


بادِ یغما گرِ نفی و انکار نے 


ان فرحناک اسرار کے 


عالمِ خواب آگیں کو زیر و زبر کر دیا 


وہ خجستہ وہ خوش ماجرا روز و شب 


وہم و خواب و خیال و گماں ہو گئے 


وہ معانی وہ احوال جاں آفریں 


بے اماںہو گئے 


فیضِ توفیق کی 


وہ رسد رک گئی 


وہ یقیں کے افق 


بے نشاں ہو گئے 


جو بھی آسان تر تھا وہ دشوار تر ہو گیا 


میری حالت یہ تھی 


جیسے میں اک سفر کردہ دور افتاد ہوں 


اور ایقانِ فرخندہ و برگزیدہ کی وہ سر زمیں 


میرے لمسِ کفِ پا سے 


قرنوںکی دوری میں 


گم ہو چکی ہے 


میں تنہا ہوں 


بے چارہ ہوں 




جب میں دائیں طرف دیکھتا تھا 


تو کیا دیکھتا تھا 


کہ انجیر و شہتوت پژمردہ ہیں 


جب میں بائیں طرف دیکھتا تھا 


تو کیا دیکھتا تھا 


کہ سارے شمالی پرندے 


جنوبی افق کے زبونی زدہ 


زرد ابہام میں 


پھڑپھڑاتے ہوئے 


بے نشاں ہوتے جاتے ہیں 



تب میں نے گزرے زمانوںمیں 


اور آنے والے زمانوں میں فریاد کی 


اے خدا! 


اے خداوند! 


اب مرا باطنِ ذات ویران ہے 


اب درونِ دروں 


اور بیرونِ بیروں 


فقط اک خلا ہے 


فقط ایک لا 


دہر دہر اور دیوم دیوم میں 


اب عدم در عدم کے سوا کچھ نہیں 


اے خداوند تو کیا ہوا 


مجھ کو تیرے نہ ہونے کی عادت نہیں 


وائے برحالِ ژرفا و بالا و پہنا! 


دریغا! سبب ہر مسبب سے اپنے جدا ہوگیا 


حسرتا! کہکشاؤں کے گلوں کا چوپان کوئی نہیں 



اور پھر میں نے 


موجود کے دائرے کی نہایت پہ نالہ کیا 


اے یقیں کے گماں 


اے گماں کے یقیں 


اے ازل آفریں 


اے ابد آفریں 


اے خدا الوداع 


اے خدایاں خدا 


الوداع، الوداع


Check this out

Tu Bhi Chup Hai By John Elia - تو بھی چپ ہے




ae kkhuda, ae خدایاں kkhuda, ae khudawand





mein tujh se maamoor tha





khud se mashooor tha





aur aik mein hi kya





nilgon aasmaanon se dewan khanaay ki





sirsabz





نکہت nafs





kiyarion taq ka sara samaa





tujh se maamoor tha





khud se mashooor tha





shehar mein majzon aur mausam ke میووں ki bohtat thi





aur میووںکی chahay kisi fasal mein





kuch bhi kami hui ho





magar moajezae roz Afzun they





imaan ka abre Bazil





dilon ki zaraat ko shadaab rakhta tha





shaam o sehar –apne مرموز aaghaz o injaam ke





husn mein





mehv rehtay they


woh daur –apne tahayur ki khar sanad haalat mein





aur –apne ibham ki dast o dil baz simtao ke





پندارہ parwar مرامیز ki har alamat mein





ik khawab ka khawab tha





khawab ki روبروئی thi





aur chaar soi thi





hum khawab they aur khowaboon mein mashgool  they








aik din





shehar ke aik shaivaa bayan aur khush lehja Nisar





dewan khanaay mein tashreef laaye





jahan ibn-e سکیت ka





tazkara ho raha tha





zara der ke baad





is tazkeray ke tasalsul mean waqfa sa peda sun-hwa





pas woh baba ki janib nazar kar ke goya hue





aap hazraat ne aaj ka moujza sun liya ?





un pay ik haalat giryaa taari thi





phir woh glogir aawaz mein





saari rudaad is moajezae ki sunanay lagey





jo Azaa khanah Shah maskeen mein





dekh kar aeye they







mujh ko un ka bayan aaj bhi yaad hai





ik جواںحالت جاںکنی mein





ضریح muqaddas ke Mahzar mein laya gaya





aur is ke ilm ke phrire ki





anfaas parwar sun-hwa di gayi





aur phir yeh sun-hwa





woh jawaa is terhan choank utha





jaisay ab taq woh soya sun-hwa tha





magar ab kisi ke jaganay se




yak bargee jaag utha hai







usay ik nai zindagi mil gayi thi





wahan koi bhi shakhs aisa nahi tha





jisay is pay herat hui ho





ke yeh baat to





chhootey hazrat ke sadqy mein honi hi thi







woh Khajastah woh khush maajra roz o shab





roz o shab hi nah they





ik zaman الوہی ka inaam jari they





aur aik ramz hamesha ka





sarchashma javidan they





woh sir chashma javidan jis ki taseer se





apna ahsasِ zaat aik ilham tha





jis se rohِ dar o baam sarshar thi





is fiza mein koi shai faqat shai nah thi







aik maienay thi





maienay ka Faizan thi





kitna shafaaf tha rooh ka aasmaa





kitni shadaab thi aag_hi ki zamee





hum ko apna nasb nama taa aadam بوالبشر yaad tha





qabal tareekh ki saari tareekh ذہنوںمیں محفوض thi





hum ko subh-e تخستین ijaad se





–apne ajdaad taq





–apne dalaan o dar





un ki bunyaad taq



saari tafseel kon o makan yaad thi





hum sab –apne yaqeen o guma ke فرحناک





asaraar mein





shaad o Khurram they





khush bain o Khursand they





ae khudawand! mein tujh se maamoor tha





aur phir





aqal انگیزہ jo darmia aagai ae





kkhuda aik safaaq prkhash o pekaar thi





jo maray aur maray darmia chhar gayi thi





maray zahn mein na saza, jaan gza aag_hi ka 


jahannum bharakne laga





aur phir





woh zamana bhi aaya ke jab





mein tre baab mein muzamahil hogaya





baad-e Yaghma gir nifi o inkaar ney





un فرحناک asaraar ke





aalmِ khawab آگیں ko zair o zabar kar diya





woh Khajastah woh khush maajra roz o shab





vahm o khawab o khayaal o guma ho gaye





woh ma-ani woh ahwaal jaan afreen





be اماںہو gaye





Faiz tofeq ki





woh rasad ruk gayi





woh yaqeen ke ufaq





be nshan ho gaye





jo bhi asaan tar tha woh dushwaar tar ho gaya





meri haalat yeh thi





jaisay mein ik safar kardah daur aftad hon





aur aiqan Farkhandah o bargzida ki woh sir zamee





mere Lams kaf-e pa se



قرنوںکی doori mein





gum ho chuki hai





mein tanha hon





be charah hon









jab mein dayen taraf daikhta tha





to kya daikhta tha





ke injeer o shehtoot pasmurdah hain





jab mein baen taraf daikhta tha





to kya daikhta tha





ke saaray shumali parinday





janoobi ufaq ke zabuni zada





zard ibham mein





phadphadatey hue





be nshan hotay jatay hain







tab mein ny guzray زمانوںمیں





aur anay walay zamanoon mein faryaad ki





ae kkhuda !





ae khudawand !





ab mra batin zaat weraan hai





ab dron daroon





aur bironِ biron





faqat ik khalaa hai





faqat aik laa





deher deher aur dyom dyom mein





ab Adam Dur Adam ke siwa kuch nahi





ae khudawand to kya sun-hwa





mujh ko tairay nah honay ki aadat nahi





why barhaal Zharfa o baala o pehna 



دریغا! sabab har msbb se –apne judda hogaya





حسرتا! کہکشاؤں ke gulon ka chopan koi nahi







aur phir mein nay





mojood ke dairay ki nihayat pay naala kya





ae yaqeen ke guma





ae guma ke yaqeen





ae azal afreen





ae abadd afreen





ae kkhuda ’alvidah’





ae خدایاں kkhuda






’alvidah’, ’alvidah’

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se