Aziyat Ki Yaaddashat By Jaun Elia - اذیت کی یادداشت


اذیت کی یادداشت

Aziyat Ki Yaaddashat By Jaun Elia - اذیت کی یادداشت


موسمِ جسم و جاں رایگاں


دل زمستاں زدہ طائرِ بے اماں


جس میں اب گرمیِ خواب پرواز تک بھی نہیں


دم بہ دم اُس گذشتہ میں برباد جانے کا احساس


جو ناگذشتہ کی سعیِ تلافی سے نومید ہے


روز، ہر روز


بے خواب آنکھوں میں چبھتا ہوا عکسِ آئینہِ آتشیں


شب، سرِ شب سے تا آخرِ شب


یقین و گماں کی پیاپے شکستیں


کہ اب مہلتِ عمر کی وہ کمک بھی نہیں ہے


نَفَس، ہر نَفَس اپنی بے خواب آنکھوں سے اپنا تماشا


کہ یہ آدمی اپنے بستر پہ بے وار مارا گیا


صبح سے شام تک


منظروں کی نگاہوں میں وہ ناشناسی


کہ شاید میں گزرے ہوئے زمانوں میں آیا تھا


آیا بھی تھا یا نہیں



Jaun Elia- جون ایلیا
John Elia poetry shayad - شاید



mosam e jism o jaan رایگاں


dil zmstan zada tair be amma


jis mein ab garmi khawab parwaaz taq bhi nahi


dam bah dam uss guzashta mein barbaad janay ka ehsas


jo ناگذشتہ ki sayِ talaafi se نومید hai


roz, har roz


be khawab aankhon mein chubhta sun-hwa aks aayinhِ aatsheen



shab, sar-e shab se taa aakhrِ shab



yaqeen o guma ki پیاپے شکستیں



ke ab mohlat Umar ki woh kumak bhi nahi hai


nafs, har nafs apni be khawab aankhon se apna tamasha




ke yeh aadmi –apne bistar pay be waar mara gaya


subah se shaam taq


manazron ki nigahon mein woh ناشناسی


ke shayad mein guzray hue zamanon mein aaya tha
aaya bhi tha ya nahi

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se