ایذا دہی کی داد جو پاتا رہا ہوں میں


 ایذا دہی کی داد جو پاتا رہا ہوں میں

ایذا دہی کی داد جو پاتا رہا ہوں میں 


ہر ناز آفریں کو ستاتا رہا ہوں میں 


اے خوش خرام! پاؤں کے چھالے تو گن ذرا


تجھ کو کہاں کہاں نہ پھراتا رہا ہوں میں



تجھ کو خبر نہیں کہ ترا حال دیکھ کر 



اکثر ترا مذاق اڑاتا رہا ہوں میں 



جس دن سے اعتماد میں آیا ترا شباب


اس دن سے تجھ پہ ظلم ہی ڈھاتا رہا ہوں میں 



بیدار کر کے تیرے بدن کی خود آ گہی 


تیرے بدن کی عمر گھٹاتا رہا ہوں میں 


اک سطر بھی کبھی نہ لکھی میں نے تیرے نام


پاگل تجھی کو یاد بھی آتا رہا ہوں میں 


شاید مجھے کسی سے محبت نہیں ہوئی 



لیکن یقین سب کو دلاتا رہا ہوں میں


اک حسنِ بے مثال کی تمثیل کے لئے


پرچھائیوں پہ رنگ گراتا رہا ہوں میں 


اپنا مثالیہ مجھے اب تک نہ مل سکا 


ذروں کو آفتاب بتاتا رہا ہوں میں 


کیا مل گیا ضمیرِ ہنر بیچ کر مجھے


اتنا کہ صرف کام چلاتا رہا ہوں میں




کل دوپہر عجیب سی اک بے دلی رہی


بس تیلیاں جلا کے بجھاتا رہا ہوں میں

Check this out

aeza dahi ki daad jo paata raha hon mein



har naz afreen ko satata raha hon mein



ae khush Khiraam ! پاؤں ke chhalay to gun zara



tujh ko kahan kahan nah پھراتا raha hon mein




tujh ko khabar nahi ke tra haal dekh kar



aksar tra mazaq urata raha hon mein




jis din se aetmaad mein aaya tra shabab



is din se tujh pay zulm hi dhaata raha hon mein




beedar kar ke tairay badan ki khud aa گہی



tairay badan ki Umar گھٹاتا raha hon mein


ik satar bhi kabhi nah likhi mein nay tairay naam


pagal tujhi ko yaad bhi aata raha hon mein



shayad mujhe kisi se mohabbat nahi hui



lekin yaqeen sab ko dilaata raha hon mein



ik hsnِ be misaal ki tamseel ke liye



parchaiyon pay rang girata raha hon mein



apna masaliya mujhe ab taq nah mil saka



zarron ko aftaab batata raha hon mein



kya mil gaya zmirِ hunar beech kar mujhe




itna ke sirf kaam chalata raha hon mein


kal dopehar ajeeb si ik be dili rahi


bas teelian jala ke bujhata raha hon mein





ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

 Kaha Hain Janey By Jaun Elia