Gawai Kis Ki Tamama Mein Zindagi By Jaun Elia


Gawai Kis Ki Tamama Mein Zindagi By Jaun Elia
Gawai Kis Ki Tamama Mein Zindagi By Jaun Elia

گنوائی کس کی تمنا میں زندگی میں نے

وہ کون ہے جسے دیکھا نہیں کبھی میں نے
  
ترا خیال تو ہے پر ترا وجود نہیں 

ترے لئے تو یہ محفل سجائی تھی میں نے  

ترے عدم کو گوارا نہ تھا وجود مرا 

سو اپنی بیخ کنی میں کمی نہ کی میں نے

ہیں میرے ذات سے منسوب صد فسانہء عشق

اور ایک سطر بھی اب تک نہیں لکھی میں نے
  
خود اپنے عشوہ و انداز کا شہید ہوں میں

خود اپنی ذات سے برتی ہے بے رخی میں نے  

مرے حریف مری یکہ تازیوں پہ نثار 

تمام عمر حلیفوں سے جنگ کی میں نے  

خراش نغمہ سے سینہ چھِلا ہوا ہے مرا 

فغاں کہ ترک نہ کی نغمہ پروری میں نے 

دوا سے فائد مقصود تھا ہی کب کہ فقط

دوا کے شوق میں صحت تباہ کی میں نے
  
زبانہ زن تھا جگر سوز تشنگی کا عذاب 

سو جوفِ سینہ میں دوزخ انڈیل لی میں نے  

سرورِ مئے پہ بھی غالب رہا شعور مرا 

کہ ہر رعایتِ غم ذہن میں رکھی میں نے 

غمِ شعور کوئی دم تو مجھ کو مہلت دے 

تمام عمر جلایا ہے اپنا جی میں نے 

علاج یہ ہے کہ مجبور کر دیا جاؤں


وگرنہ یوں تو کسی کی نہیں سنی میں نے  

رہا میں شاہدِ تنہا، نشینِ مسندِ غم

اور اپنے کربِ انا سے غرض رکھی میں نے

Check this out

gavayi kis ki tamanna mein zindagi mein ne



woh kon hai jisay dekha nahi kabhi mein ne



tra khayaal to hai par tra wujood nahi



tre liye to yeh mahfil sajai thi mein ne



tre Adam ko gawara nah tha wujood mra



so apni beekh kinny mein kami nah ki mein ne


hain mere zaat se mansoob sad فسانہء ishhq


aur aik satar bhi ab taq nahi likhi mein ne



khud –apne ishva o andaaz ka shaheed hon mein


khud apni zaat se Barti hai be rukhi mein ne



maray hareef meri yakka تازیوں pay Nisar



tamam Umar hlifon se jung ki mein ne



kharaash naghma se seenah chhalla sun-hwa hai mra


fghan ke tark nah ki naghma parwari mein ne


dawa se fayd maqsood tha hi kab ke faqat


dawa ke shoq mein sahet tabah ki mein ne



Zubana zan tha jigar soaz tashnagi ka azaab



so jof seenah mein dozakh undail li mein ne



srorِ maizn pay bhi ghalib raha shaoor mra



ke har riayat gham zehan mein rakhi mein ne


gham e shaoor koi dam to mujh ko mohlat day



tamam Umar jalaya hai apna jee mein ne


ilaaj yeh hai ke majaboor kar diya جاؤں




wagerna yun to kisi ki nahi suni mein ne


raha mein Shahid tanha, nasheen msndِ gham


aur –apne karb-e anaa se gharz rakhi mein ne

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se