Ghum Hui By Jaun Elia - منظر سا تھا کوئی ک


منظر سا تھا کوئی کہ نظر اس میں گم ہوئی 
Ghum Hui By Jaun Elia - منظر سا تھا کوئی ک

سمجھو کہ خواب تھا کہ سحر اس میں گم ہوئی 

سودائے رنگ وہ تھا کہ اترا خود اپنا رنگ 

پھر یہ کہ ساری جنسِ ہنر اس میں گم ہوئی 

وہ میرا اک گمان کہ منزل تھا جس کا نام 

ساری متاعِ شوقِ سفر اس میں گم ہوئی 

دیوار کے سوا نہ رہا کچھ دلوں کے بیچ 

ہر صورتِ کشایشِ در اس میں گم ہوئی 

لائے تھے رات اس کی خبر قاصدانِ دل 

دل میں وہ شور اٹھا کہ خبر اس میں گم ہوئی 

اک فیصلے کا سانس تھا اک عمر کا سفر 

لیکن تمام راہگزر اس میں گم ہوئی 

بس جون کیا کہوں کہ مری ذاتِ نفع جو 

جس کام میں یہاں تھا ضرور اس میں گم ہوئی


Check this out
Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔

manzar sa tha koi ke nazar is mein gum hui


samjhoo ke khawab tha ke sehar is mein gum hui


sodaye rang woh tha ke Itra khud apna rang


phir yeh ke saari jnsِ hunar is mein gum hui


woh mera ik gumaan ke manzil tha jis ka naam


saari mata-e shoqِ safar is mein gum hui


deewar ke siwa nah raha kuch dilon ke beech


har surat_e_ کشایش Dur is mein gum hui


laaye they raat is ki khabar قاصدان dil


dil mein woh shore utha ke khabar is mein gum hui


ik faislay ka saans tha ik Umar ka safar


lekin tamam rahguzar is mein gum hui


bas June kya kahoon ke meri zaat-e naffa jo



jis kaam mein yahan tha zaroor is mein gum hui

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se