Haal Yeh Hai K Khwaish By Jaun Elia - حال یہ ہے کہ خواہش


حال یہ ہے کہ خواہش، پرسشِ حال بھی نہیں 

Haal Yeh Hai K Khwaish By Jaun Elia - حال یہ ہے کہ خواہش


اس کا خیال بھی نہیں اپنا خیال بھی نہیں 


اے شجرِ حیاتِ شوق، ایسی خزاں رسیدگی! 


پوششِ برگ و گل تع کیا جسم پہ چھال بھی نہیں 


مجھ میں وہ شخص ہو چکا جس کا کوئی حساب تھا 


سود ہے کیا، زیاں ہے کیا، اس کا سوال بھی نہیں 


مست ہیں اپنے حال میں دل زدگان و دلبراں 


صلح و سلام تو کجا، بحث و جدال بھی نہیں 


جو مرا حوصلہ تو دیکھ، داد تو دے کہ اب مجھے 


شوقِ کمال بھی نہیں، خوفِ زوال بھی نہیں 


خیمہ گہ نگاہ کو لوٹ لیا گیا ہے کیا؟ 


آج افق کے دوش پر گرد کی شال بھی نہیں 


اف یہ فضا سے احتیاط، تا کہیں اڑ نہ جائیں ہم 


بادِ جنوب بھی نہیں، بادِ شمال بھی نہیں 


وجہ معاشِ بے دلاں، یاس ہے اب مگر کہاں 


اس کے درود کا گماں، فرضِ محال بھی نہیں 


غارتِ روز و شب کو دیکھ، وقت کا یہ غضب تو دیکھ 


کل تو نڈھال بھی تھا میں، آج نڈھال بھی نہیں 


میرے زبان و ذات کا ہے یہ معاملہ کہ اب 


صبحِ فراق بھی نہیں، شامِ وصال بھی نہیں 


پہلے ہمارے ذہن میں حسن کی اک مثال تھی 


اب تو ہمارے ذہن میں کوئی مثال بھی نہیں 


میں بھی بہت عجیب ہوں اتنا عجیب ہوں کہ بس 


خود کو تباہ کر لیا اور ملال بھی نہیں


haal yeh hai ke khwahish, Pursish haal bhi nahi

is ka khayaal bhi nahi apna khayaal bhi nahi

ae shjrِ hayaat shoq, aisi khizaa raseedgi !


poshish barg o Gul تع kya jism pay chhaal bhi nahi


mujh mein woh shakhs ho chuka jis ka koi hisaab tha


sood hai kya, zayan hai kya, is ka sawal bhi nahi


mast hain –apne haal mein dil zadgaan o دلبراں


sulah o سلام to kija, behas o Jaddal bhi nahi


jo mra hosla to dekh, daad to day ke ab mujhe


shoqِ kamaal bhi nahi, khofِ zawaal bhi nahi


khaima گہ nigah ko lout liya gaya hai kya ?


aaj ufaq ke dosh par gird ki shaal bhi nahi


uf yeh fiza se ahthyat, taa kahin urr nah jayen hum


baad-e junoob bhi nahi, baad-e shumal bhi nahi


wajah muaash be dlan, yaas hai ab magar kahan


is ke duroood ka guma, frzِ mahaal bhi nahi


ghaarat roz o shab ko dekh, waqt ka yeh gazabb to dekh


kal to nidhaal bhi tha mein, aaj nidhaal bhi nahi


mere zabaan o zaat ka hai yeh maamla ke ab


subh-e faraaq bhi nahi, shamِ visale bhi nahi


pehlay hamaray zehan mein husn ki ik misaal thi


ab to hamaray zehan mein koi misaal bhi nahi


mein bhi bohat ajeeb hon itna ajeeb hon ke bas


khud ko tabah kar liya aur malaal bhi nahi
Check this out


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se