Hai Ajeeb Rang Ki By Jaun Elia - ہے عجیب رنگ کی داستاں


ہے عجیب رنگ کی داستاں، گئی پل کا تو، گئی پل کا میں 
Hai Ajeeb Rang Ki By Jaun Elia - ہے عجیب رنگ کی داستاں

سو ہیں اب کہاں؟ مگر اب کہاں، گئی پل کا تو، گئی پل کا میں  


نہ یقیں ہیں اب، نہ گماں ہیں اب، سو کہاں تھے جب سو کہاں ہیں اب 


وہ یقیں یقیں، وہ گماں گماں،گئی پل کا تو، گئی پل کا میں  


مری جاں وہ پل جو گئی نکل، کوئی پل تھی وہ کہ ازل، ازل 


سو گزشتگی میں ہیں بے کراں، گئی پل کا تو، گئی پل کا میں  


وہی کارواں ہے کہ ہے رواں وہی وصل و فصل ہیں درمیاں 


ہیں غبارِ رفتہءِ کارواں، گئی پل کا تو، گئی پل کا میں  


تو مرے بدن سے جھلک بھی لے ، میں تیرے بدن سے مہک بھی لوں 


ہمہ نارسائی ہیں جانِ جاں، گئی پل کا تو، گئی پل کا میں  


گلہ ِ فراق تو کیوں بھلا طلبِ وصال تو کیا بھلا 


کسی آگ کا تھے بس اک دھواں، گئی پل کا تو ، گئی پل کا میں



Check this out


hai ajeeb rang ki dastan, gayi palllll ka to, gayi palllll ka mein




so hain ab kahan? magar ab kahan, gayi palllll ka to, gayi palllll ka mein




nah yaqeen hain ab, nah guma hain ab, so kahan they jab so kahan hain ab



woh yaqeen yaqeen, woh guma guma, gayi palllll ka to, gayi palllll ka mein



meri jaan woh palllll jo gayi nikal, koi palllll thi woh ke azal, azal



so گزشتگی mein hain be karaan, gayi palllll ka to, gayi palllll ka mein



wohi karwan hai ke hai rawan wohi wasal o fasal hain darmiyan



hain gubhar رفتہء karwan, gayi palllll ka to, gayi palllll ka mein



to maray badan se jhalak bhi le, mein tairay badan se mehak bhi lon



hama naarasai hain jaan-e jaan, gayi palllll ka to, gayi palllll ka mein



gilah cotesbach faraaq to kyun bhala tlbِ visale to kya bhala




kisi aag ka they bas ik dhuwan, gayi palllll ka to, gayi palllll ka mein

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se