Har Bar Tum Mere Pass Ati Rahi Ho By John Elia - سزا


سزا 


ہر بار میرے سامنے آتی رہی ہو تم 
har bar mere samney ati rahi ho tum

ہر بار تم سے مل کے بچھڑتا رہا ہوں میں 
har bar tum sey mil kar bicharta raha ho main

تم کون ہو یہ خود بھی نہیں جانتی ہو تم 
tum kon ho yeh khud bhi nehi janti ho tum

میں کون ہوں یہ خود بھی نہیں جانتا ہوں میں 
main kon ho yeh khud bhi nehi janta hoo main

تم مجھ کو جان کر ہی پڑی ہو عذاب میں 
tum majh ko jaan kar hi pari ho azaab main

اور اِس طرح خود اپنی سزا بن گیا ہوں میں 
aur es tarha khud apni saza ban gaya ho main

تم جس زمین پر ہو میں اس کا خدا نہیں 
tum jis zameen per ho main es ka khuda nehi

پس سر بسر اذّیت و آزار ہی رہو 
pass sar basar eziyat w aazara hi raho

بیزار ہو گئی ہو بہت زندگی سے تم 
bezar ho gayi ho bohat zindagi sey tum

جب بس میں کچھ نہیں ہے تو بیزار ہی رہو 
jab bus main kuch nehi hai toh bezar hi raho

تم کو یہاں کے سایہ و پرتو سے کیا غرض 
tum ko yaha k saaya wa par toh sey kiya garz

تم اپنے حق میں بیچ کی دیوار ہی رہو 
tum ney apney haq mein beech ki dawar hi raho

میں ابتدائے عشق سے بے مہر ہی رہا 
main ibtida -e - ishq sey b mehar hi raha

تم انتہائے عشق کا معیار ہی رہو 
tum intihaye ishq ka mayar hi raho

تم خون تھوکتی ہو یہ سن کر خوشی ہوئی 
tum khoon thokti ho yeh sun kar khushi hui

اس رنگ اس ادا میں بھی پُرکار ہی رہو 
es rang es ada mein bhi perkar hi raho


میں نے یہ کب کہا تھا محبت میں ہے نجات 
maine yeh kab kaha tha muhabbat main hai nijat


میں نے یہ کب کہا تھا وفادار ہی رہو 
main yeh kab kaha tha wafa dar hi raho


اپنی متاعِ ناز لُٹا کر میرے لیے 
apni mata e naaz luta kar mere liye

بازارِ التفات میں نادار ہی رہو 
bazar e altifat mein naadaar hi raho

جب میں تمہیں نشاطِ محبت نہ دے سکا 
jab main tumhey nashaq e muhabbat na da saka

غم میں کبھی سکونِ رفاقت نہ دے سکا 
gham mein kabhi sakoon e rifaqat na da saka


جب میرے سب چراغِ تمنا ہوا کے ہیں 
jab mere sub chirag e tamana hawa k hai


جب میرے سارے خواب کسی بے وفا کے ہیں 
jab mere sarey khwab kisi be wafa k hai


پھر مجھ کو چاہنے کا تمہیں کوئی حق نہیں 
phir majh ko chahney ka tumhey kio haq nehi

تنہا کراہنے کا تمہیں کوئی حق نہیں
tamana karahney ka tumhey kio haq nehi

check this out

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se