Har Jaa by Jaun Elia - ہار جا اے نگاہِ ناکارہ


Har Jaa by Jaun Elia -  ہار جا اے نگاہِ ناکارہ
ہار جا اے نگاہِ ناکارہ 

گُم افق میں ہوا وہ طیارہ  


آہ وہ محملِ فضا پرواز 


چاند کو لے گیا ہے سیارہ  


صبح اُس کو وداع کر کے میں

نصف شب تک پھرا ہوں آوارہ

  
سانس کیا ہیں کے میرے سینے میں 


ہر نفس چل رہا ہے اِک آرا  


کچھ کہا بھی جو اُس سے حال تو کب؟ 


جب تلافی رہی نہ کفارہ  


کیا تھا آخر مِرا وہ عشقِ عجیب 


عشق کا خوں کہ عشقِ خوں خوارہ  


ناز کو جس نے اپنا حق سمجھا 


کیا تمھیں یاد ہے وہ بے چارہ  


چاند ہے آج کچھ نڈھال نڈھال 


کیا بہت تھک گیا ہے ہرکارہ  


اِس مسلسل شبِ جُدائی میں 


خون تھوکا گیا ہے مہ پارہ  


ہو گئی ہے میرے سفر کی سحر 


کوچ کا بج رہا ہے نقارہ



Check this out


Youm E Pakistan By John Elia - یوم پاکستان کے موقع پر

Urdu roman

haar ja ae ngahِ nakara



gum ufaq mein sun-hwa woh tayyarah



aah woh mehmil fiza parwaaz



chaand ko le gaya hai sayarah




subah uss ko vidaa kar ke mein



nisf shab taq phira hon aawara




saans kya hain ke mere seenay mein



har nafs chal raha hai ik aara




kuch kaha bhi jo uss se haal to kab ?




jab talaafi rahi nah kaffara




kya tha aakhir mِra woh ashqِ ajeeb




ishhq ka khoo ke ashqِ khoo خوارہ



naz ko jis naay apna haq samgha



kya tumhen yaad hai woh be charah



chaand hai aaj kuch nidhaal nidhaal



kya bohat thak gaya hai har kaarah



iss musalsal shab_e_ judaee mein



khoon thoka gaya hai Meh Parah



ho gayi hai mere safar ki sehar




coach ka baj raha hai naqarah

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se