Janey kaha By Jaun Elia - جانے کہاں گیا ہے


جانے کہاں گیا ہے وہ جو ابھی یہاں تھا؟ 


Janey kaha By Jaun Elia - جانے کہاں گیا ہے



وہ جو ابھی یہاں تھا، وہ کون تھا ، کہاں تھا؟ 

تا لمحہ گزشتہ یہ جسم اور سایے 

زندہ تھے رائیگاں میں، جو کچھ تھا رائیگاں تھا 

اب جس کی دید کا ہے سودا ہمارے سر میں 

وہ اپنی ہی نظر میں اپنا ہی اک سماں تھا 

کیا کیا نہ خون تھوکا میں اس گلی میں یارو 

سچ جاننا وہاں تو جو فن تھا رائیگاں تھا 

یہ وار کر گیا ہے پہلو سے کون مجھ پر 

تھا میں ہی دائیں بائیں اور میں ہی درمیاں تھا 

اس شہر کی حفاظت کرنی تھی ہم کو جس میں 

آندھی کی تھیں فصیلیں اور گرد کا مکاں تھا 

تھی اک عجب فضا سی امکانِ خال و خد کی 

تھا اک عجب مصور اور وہ مرا گماں تھا 

عمریں گزر گئی تھیں ہم کو یقیں سے بچھڑے 

اور لمحہ اک گماں کا صدیوں میں بے اماں تھا 

جب ڈوبتا چلا میں تاریکیوں کی تہ میں 

تہ میں تھا اک دریچہ اور اس میں آسماں تھا


jaaane kahan gaya hai woh jo abhi yahan tha ?



woh jo abhi yahan tha, woh kon tha, kahan tha ?




taa lamha guzashta yeh jism aur sayay



zindah they rayagan mein, jo kuch tha rayagan tha



ab jis ki deed ka hai soda hamaray sir mein


woh apni hi nazar mein apna hi ik samaa tha


kya kya nah khoon thoka mein is gali mein yaaro


sach janna wahan to jo fun tha rayagan tha


yeh waar kar gaya hai pehlu se kon mujh par


tha mein hi dayen baen aur mein hi darmiyan tha


is shehar ki hifazat karni thi hum ko jis mein


aandhi ki theen fasilain aur gird ka makan tha


thi ik ajab fiza si Imkaan khhaal o khad ki


tha ik ajab musawir aur woh mra guma tha


umrein guzar gayi theen hum ko yaqeen se bichhre


aur lamha ik guma ka sadiyoon mein be amma tha


jab dobta chala mein tarikeon ki teh mein


teh mein tha ik daricha aur is mein aasmaa tha

Check this out

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se