Jashan Ka By Jaun Elia - جشن کا آسیب


جشن کا آسیب 

Jashan Ka By Jaun Elia - جشن کا آسیب


سکوتِ بیکراں میں سہ پہر کا چوک ویراں ہے 


دکانیں بند ہیں 


سارے دریچے بے تنفس ہیں 


در و دیوار کہتے ہیں 


یہاں سے ایک سیلِ شعلہ ہائے تُند گزرا ہے 


پھر اُسکے بعد کوئی بھی نہیں آیا 


خموشی کوچہ و برزن میں فریادی ہے 


کوئی تو گزر جائے 


کوئی آوازِ پا آئے 


شمارِ لمحہ و ساعت سے بیگانہ فضا میں 


اِک صدائے پرفشانی کوند اُٹھتی ہے 


کوئی طائر فضا میں سایہ آسا تیر جاتا ہے 


سگانِ زرد کا اِک غول اِک کوچے سے نکلا ہے 


وہ تیزی سے گزر جاتے ہیں 


وہ اور اُن کے سایے بھی 


سکوتِ بیکراں میں سہ پہر کا چوک ویراں ہے


Check this out

Tu Bhi Chup Hai By John Elia - تو بھی چپ ہے



jashnn ka asaib





sakoot-e beqaran mein sah pehar ka chowk viran hai





dukanain band hain





saaray dareechay be tnfs hain





Dur o deewar kehte hain





yahan se aik sale shola haae tund guzra hai





phir aُske baad koi bhi nahi aaya





khmoshi koocha o barzan mein faryadi hai





koi to guzar jaye





koi aawazِ pa aeye





shumaar lamha o saa-at se begana fiza mein





ik sadaye پرفشانی kond uthtee hai





koi Tair fiza mein saya aasa teer jata hai





سگان zard ka ik ghool ik koochy se nikla hai





woh taizi se guzar jatay hain





woh aur unn ke sayay bhi






sakoot-e beqaran mein sah pehar ka chowk viran hai

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se