Khoob Hai By Jaun Elia - خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی


Khoob Hai By Jaun Elia -  خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی
خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی 

میں بھی برباد ہو گیا، تو بھی
  
حسنِ مغموم، تمکنت میں تری 

فرق آیا نہ یک سرِ مو بھی  

یہ نہ سوچا تھا زیرِ سایہ زلف

کہ بچھڑ جائے گی یہ خوشبو بھی


حسن کہتا تھا چھیڑنے والے 

چھیڑنا ہی تو بس نہیں چھو بھی  

ہائے اس کا وہ موج خیز بدن

میں تو پیاسا رہا لبِ جُو بھی 

یاد آتے ہیں معجزے اپنے

اور اس کے بدن کا جادو بھی  


یاسمیں! اس کی خاص محرمِ راز 

یاد آیا کرے گی اب تو بھی

یاد سے اس کی ہے مرا پرہیز

اے صبا اب نہ آئیو تو بھی  

ہیں یہی جون ایلیا جو کبھی 

سخت مغرور بھی تھے، بد خو بھی


Check this out

khoob hai shoq ka yeh pehlu bhi



mein bhi barbaad ho gaya, to bhi



husn maghmoom, Tamkanat mein tri



farq aaya nah yak sar-e mo bhi



yeh nah socha tha zair-e saya zulff


ke bhichar jaye gi yeh khusbhoo bhi



husn kehta tha chhairnay walay



chhairna hi to bas nahi chhoo bhi



haae is ka woh mouj khaiz badan


mein to piyasa raha lbِ jُo bhi


yaad atay hain moajezae –apne



aur is ke badan ka jadoo bhi



yasmeen! is ki khaas Mehram raaz



yaad aaya kere gi ab to bhi



yaad se is ki hai mra parhaiz



ae Saba ab nah aayo to bhi



hain yahi June Ailiya jo kabhi



sakht maghrour bhi thay, bad khoo bhi


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se