Khushi Hui By Jaun Elia - تم سے مل کر بہت خوشی ہو کیا


گاہے گاہے بس اب یہی ہو کیا 
Khushi Hui By Jaun Elia - تم سے مل کر بہت خوشی ہو کیا

تم سے مل کر بہت خوشی ہو کیا 

مل رہی ہو بڑ ے تپاک کے ساتھ 

مجھ کو یکسر بھلا چکی ہو کیا 

یاد ہیں اب بھی اپنے خواب تمہیں 

مجھ سے مل کر اداس بھی ہو کیا 

بس مجھے یوں ہی اک خیال آیا 

سوچتی ہو ، تو سوچتی ہو کیا 

اب مری کوئی زندگی ہی نہیں 

اب بھی تم میری زندگی ہو کیا 

کیا کہا عشق جاودانی ہے 

آخری بار مل رہی ہو کیا 

ہاں فضا یاں کی سوئی سوئی سی ہے 

تو بہت تیز روشنی ہو کیا 

میرے سب طنز بےاثر ہی رہے 

تم بہت دور جاچکی ہو کیا 

اس سمندر پہ تشنہ کام ہوں میں 

بان، تم اب بھی بہہ رہی ہو کیا 

دل میں اب سوز انتظار نہیں 

شمع امید بجھ گئی ہو کیا


Check this out

Youm E Pakistan By John Elia - یوم پاکستان کے موقع پر

gahe gahe bas ab yahi ho kya


tum se mil kar bohat khushy ho kya


mil rahi ho barr y tapaak ke sath


mujh ko yaksar bhala chuki ho kya


yaad hain ab bhi –apne khawab tumhe


mujh se mil kar udaas bhi ho kya


bas mujhe yun hi ik khayaal aaya


sochtee ho, to sochtee ho kya



ab meri koi zindagi hi nahi



ab bhi tum meri zindagi ho kya


kya kaha ishhq javedani hai


aakhri baar mil rahi ho kya


haan fiza yaan ki soi soi si hai


to bohat taiz roshni ho kya


mere sab tanz be asr hi rahay


tum bohat daur jachki ho kya


is samandar pay Tishna kaam hon mein


baan, tum ab bhi beh rahi ho kya


dil mein ab soaz intzaar nahi



shama umeed bujh gayi ho kya

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se