Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔


مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔  
Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔
Jaun Elia-  جون ایلیا


تمہارے نام تمہارے نشاں سے بے سروکار 


تمہاری یاد کے موسم گزرتے جاتے ہیں 


بس ایک منظرِ بے ہجر و وصل ہے جس میں 


ہم اپنے آپ ہی کچھ رنگ بھرتے جاتے ہیں 



نہ وہ نشاطِ تصور کہ لو تم آ ہی گئے 


نہ زخمِ دل کی ہے سوزش کوئی جو سہنی ہو 


نہ کوئی وعدہ و پیماں کی شام ہے نہ سحر 


نہ شوق کی ہے کوئی داستاں جو کہنی ہو 



نہیں جو محملِ لیلائے آرزو سرِ راہ 


تو اب فضا میں فضا کے سوا کچھ اور نہیں 


نہیں جو موجِ صبا میں کوئی شمیمِ پیام 


تو اب صبا میں صبا کے سوا کچھ اور نہیں 


اتار دے جو کنارے پہ ہم کو کشتیِ وہم 


تو گرد و پیش کو گرداب ہی سمجھتے ہیں 


تمہارے رنگ مہکتے ہیں خواب میں جب بھی 


تو خواب میں بھی انہیں خواب ہی سمجھتے ہیں 


نہ کوئی زخم نہ مرحم کہ زندگی اپنی 


گزر رہی ہے ہر احساس کو گنوانے میں 


مگر یہ زخم یہ مرحم بھی کم نہیں شاید 


کہ ہم ہیں ایک زمیں پر اور اک زمانے میں

tumahray naam tumahray nshan se be sarokaar



tumhaarii yaad ke mausam guzarte jatay hain



bas aik manzar be hijar o wasal hai jis mein



hum –apne aap hi kuch rang bhartay jatay hain




nah woh nshatِ tasawwur ke lau tum aa hi gaye




nah zakham dil ki hai soozish koi jo sehni ho

\

nah koi wada o paimaan ki shaam hai nah sehar



nah shoq ki hai koi dastan jo kohni ho



nahi jo mehmil لیلائے arzoo sar-e raah



to ab fiza mein fiza ke siwa kuch aur nahi



nahi jo mojِ Saba mein koi Shamem payam




to ab Saba mein Saba ke siwa kuch aur nahi



utaar day jo kinare pay hum ko kshtiِ vahm



to gird o paish ko gardaab hi samajte hain



tumahray rang mehaktay hain khawab mein jab bhi



to khawab mein bhi inhen khawab hi samajte hain



nah koi zakham nah mrhm ke zindagi apni



guzar rahi hai har ehsas ko gunwanay mein



magar yeh zakham yeh mrhm bhi kam nahi shayad


ke hum hain aik zamee par aur ik zamane mein

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se