Mamol By Jaun Elia - معمول


معمول  
Mamol By Jaun Elia - معمول
جانے کب سے 
janey kab se

مجھے یاد بھی تو نہیں جانے کب سے 
majhey yaad bhi toh nehi janey kab sey

ہم اک ساتھ گھر سے نکلتے ہیں
hum aik saath ghar sey nikltey hai

اور شام کو
aur shaam ko

ایک ہی ساتھ گھر لوٹتے ہیں
aik hi saath ghar lottey hai

مگر ہم نے اک دوسرے سے
magar hum ney aik dosrey sey

کبھی حال پرسی نہیں کی 
kabhi haal persi nehi ki

نہ اک دوسرے کو  
na aik dosrey ko

کبھی نام لے کر مخاطب کیا 
kabhi naam le kar muqatib kiya

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se