Mera Tarz e bayan By John - قطعہ - در ہجوِہم نشینانِ خود



قطعہ 

در ہجوِہم نشینانِ خود 



دا دریغا کہ ہم نشیں میرے 


میرا طرز بیاں چراتے ہیں 



حیف صد حیف نقدِ جاں کہ امیں 



کیسہِ نقدِ جاں چراتے ہیں 



امہاتِ یقیں کہ رحموں سے 



نطفہ نطفہ گماں چراتے ہیں 




خس و خاشاک طبع ہیں لیکن 



دم شعلہِ فشاں چراتے ہیں 



ان پہ ہنسیے کہ روئیے آخر 



رایگاں، شایگاں چراتے ہیں 



نقل کر کے کراہنے کی مرے 



میری بیماریاں چراتے ہیں 



معترف ہوں کمال کا ان کے 



میرے دل کا سماں چراتے ہیں 



مے کش ایسے کہ اپنے نشے میں 



میری انگڑائیاں چراتے ہیں 



کیا بتاؤں ہیں کیسے دیدہ دلیر 



مجھ سے ہی مجھ کو ہاں چراتے ہیں 






Jaun Elia- جون ایلیا

dar ہجوہم نشینان nashniyaan hujoom khud

daa دریغا darigaa ke hum nashen mere

mera tarz bayan churatay hain

haif sad haif NAQAD jaan ke amin

kessa NAQAD jaan churatay hain

umhaat yaqeen ke رحموں  rahmiyo se

nutfa nutfa guma churatay hain


khas o khashaak taba hain lekin


dam shola fishan churatay hain


un pay ہنسیے  hasney sey ke royie aakhir


رایگاں, شایگاں raygah shaaiyag churatay hain


naqal kar ke karahnay ki maray

meri bemariyan churatay hain

mutarrif hon kamaal ka un ke

mere dil ka samaa churatay hain

me kash aisay ke –apne nashay mein

meri angraiyaan churatay hain

ya batao بتاؤں hain kaisay deedaa dilair

mujh se hi mujh ko haan churatay hain

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Yaro k Humra Chaley By Jaun Elia