Meseeha By Jaun Elia - سوچا ہے کہ اب کارِ مسیحا نہ کریں گے


سوچا ہے کہ اب کارِ مسیحا نہ کریں گے 


Meseeha By Jaun Elia - سوچا ہے کہ اب کارِ مسیحا نہ کریں گے



وہ خون بھی تھوکے گا تو پروا نہ کریں گے 

اس بار وہ تلخی ہے کہ روٹھے بھی نہیں ہم 

اب کے وہ لڑائی ہے کہ جھگڑا نہ کریں گے 

یاں اس کے سلیقے کے ہیں آثار تو کیا ہم 

اس پر بھی یہ کمرا تہ و بالا نہ کریں گے 

اب نغمہ طرازانِ برا فروختہ اے شہر! 

واسوخت کہیں گے غزل انشا نہ کریں گے 

ایسا ہے کہ سینے میں سلگتی ہیں خراشیں 

اب سانس بھی ہم لیں گے تو اچھا نہ کریں گے
Check this out



socha hai ke ab karِ masiihaa nah karen ge


woh khoon bhi تھوکے ga to parwa nah karen ge


is baar woh talkhi hai ke ruthe bhi nahi hum


ab ke woh larai hai ke jhagra nah karen ge


yaan is ke saliqay ke hain assaar to kya hum


is par bhi yeh kamra teh o baala nah karen ge


ab naghma طرازان bura فروختہ ae shehar !


واسوخت kahin ge ghazal insha nah karen ge


aisa hai ke seenay mein sulagti hain kharashein


ab saans bhi hum len ge to achaa nah karen ge

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se