Naya Rishta By Jaun Elia - نیا اک رشتہ پیدا کیوں کریں ہم


نیا اک رشتہ پیدا کیوں کریں ہم 


Naya Rishta By Jaun Elia - نیا اک رشتہ پیدا کیوں کریں ہم



بچھڑنا ہے تو جھگڑا کیوں کریں ہم 

خموشی سے ادا ہو رسمِ دوری 

کوئی ہنگامہ برپا کیوں کریں ہم 

یہ کافی ہے کہ ہم دشمن نہیں ہیں 

وفاداری کا دعویٰ کیوں کریں ہم 

وفا، اخلاص، قربانی،مرو ّت 

اب ان لفظوں کا پیچھا کیوں کریں ہم 

سنا دیں عصمتِ مریم کا قصّہ؟ 

پر اب اس باب کو وا کیوں کریں ہم 

زلیخائے عزیزاں بات یہ ہے 

بھلا گھاٹے کا سودا کیوں کری ہم 

ہماری ہی تمنّا کیوں کرو تم 

تمہاری ہی تمنا کیوں کریں ہم 

کیا تھا عہد جب لمحوں میں ہم نے 

تو ساری عمر ایفا کیوں کریں ہم 

اُٹھا کر کیوں نہ پھینکیں ساری چیزیں 

فقط کمروں میں ٹہلا کیوں کریں ہم 

جو اک نسل فرومایہ کو پہنچے 

وہ سرمایہ اکٹھا کیوں کریں ہم 

نہیں دُنیا کو جب پروا ہماری 

تو پھر دُنیا کی پروا کیوں کریں ہم 

برہنہ ہیں سرِبازار تو کیا 

بھلا اندھوں سے پردہ کیوں کریں ہم 

ہیں باشندے اسی بستی کے ہم بھی 

سو خود پر بھی بھروسا کیوں کریں ہم 

چبا لیں کیوں نہ خود ہی اپنا ڈھانچہ 

تمہیں راتب مہیا کیوں کریں ہم 

پڑی رہنے دو انسانوں کی لاشیں 

زمیں کا بوجھ ہلکا کیوں کریں ہم 

یہ بستی ہے مسلمانوں کی بستی 

یہاں کارِ مسیحا کیوں کریں ہم

Check this out



naya ik rishta peda kyun karen hum


bicharna hai to jhagra kyun karen hum


khmoshi se ada ho rasm-e doori


koi hungama barpaa kyun karen hum


yeh kaafi hai ke hum dushman nahi hain


wafadaari ka daawa kyun karen hum


wafa, ikhlaas, qurbani, mrw T-


ab un lafzon ka peecha kyun karen hum


suna den asmat maryam ka qssh ?


par ab is baab ko waa kyun karen hum


زلیخائے عزیزاں baat yeh hai


bhala ghatay ka soda kyun kari hum


hamari hi tamanna kyun karo tum


tumhari hi tamanna kyun karen hum


kya tha ehad jab lamhoon mein hum ne


to saari Umar aifaa kyun karen hum


uttha kar kyun nah phinkin saari cheeze


faqat kamron mein tehla kyun karen hum


jo ik nasal faromaya ko puhanche


woh sarmaya akhatta kyun karen hum


nahi duniya ko jab parwa hamari


to phir duniya ki parwa kyun karen hum


burhenapa hain sar e bazar to kya


bhala andhon se parda kyun karen hum


hain bashinday isi bastii ke hum bhi


so khud par bhi bhrosa kyun karen hum


chaba len kyun nah khud hi apna dhancha


tumhe Ratib muhayya kyun karen hum


pari rehne do insanon ki lashain


zamee ka boojh halka kyun karen hum


yeh bastii hai musalmanoon ki bastii

yahan karِ masiihaa kyun karen hum

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se