Parwa nehi By Jaun Elia - اخلاق نہ برتیں گے


اخلاق نہ برتیں گے مدارا نہ کریں گے 


Parwa nehi By Jaun Elia - اخلاق نہ برتیں گے



اب ہم بھی کسی شخص کی پرواہ نہ کریں گے 

کچھ لوگ کئی لفظ غلط بول رہے ہیں 

اصلاح مگر ہم بھی اب اصلا نہ کریں گے 

کم گوئی کہ اک وصف حماقت ہے ہر طور 

کم گوئی کو اپنائیں گے چہکا نہ کریں گے 

اب سہل پسندی کو بنائیں گے وتیرہ 

تا دیر کسی باب میں سوچا نہ کریں گے 

غصہ بھی ہے تہذیب تعلق کا طلب گار 

ہم چپ ہیں، بھرے بیٹھے ہیں، غصہ نہ کریں گے 

کل رات بہت غور کیا ہے سو ہم اے جون 

طے کر کے اٹھے ہیں کہ تمنا نہ کریں گے

Check this out


ikhlaq nah brtin ge مدارا nah karen ge


ab hum bhi kisi shakhs ki parwah nah karen ge


kuch log kayi lafz ghalat bol rahay hain


islaah magar hum bhi ab اصلا nah karen ge


kam goi ke ik Wasf hamaqat hai har tor


kam goi ko apnayen ge چہکا nah karen ge


ab sahal pasandi ko banayen ge vtirh


taa der kisi baab mein socha nah karen ge


gussa bhi hai tahazeeb talluq ka talabb gaar


hum chup hain, bharay baithy hain, gussa nah karen ge


kal raat bohat ghhor kya hai so hum ae June


tey kar ke utthay hain ke tamanna nah karen ge

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se