Sar Hi Phoorey Nadamat Mein by Jaun Elia


سر ہی اب پھوڑیے ندامت میں 
Sar Hi Phoorey Nadamat Mein by Jaun Elia

نیند آنے لگی ہے فرقت میں 

ہیں دلیلیں تیرے خلاف مگر 

سوچتا ہوں تیری حمایت میں 

روح نے عشق کا فریب دیا 

جسم کا جسم کی عداوت میں 

اب فقط عادتوں کی ورزش ہے 

روح شامل نہیں شکایت میں 

عشق کو درمیاں نہ لاؤ کہ میں 

چیختا ہوں بدن کی عسرت میں 

یہ کچھ آسان تو نہیں ہے کہ ہم 

روٹھتے اب بھی ہیں مروت میں 

وہ جو تعمیر ہونے والی تھی 

لگا گئی آگ اس عمارت میں 

اپنے حجرہ کا کیا بیاں کہ یہاں 

خون تھوکا گیا شرارت میں 

وہ خلا ہے کہ سوچتا ہوں میں 

اس سے کیا گفتگو ہو خلوت میں 

زندگی کس طرح بسر ہو گی 

دل نہیں لگ رہا محبت میں


Check this out


Youm E Pakistan By John Elia - یوم پاکستان کے موقع پر


2
sir hi ab پھوڑیے nedamat mein


neend anay lagi hai furqat mein



hain daleelen tairay khilaaf magar



sochta hon teri himayat mein



rooh naay ishhq ka fraib diya



jism ka jism ki adawat mein



ab faqat aadato ki werzish hai



rooh shaamil nahi shikayat mein



ishhq ko darmiyan nah لاؤ ke mein



cheekhta hon badan ki usrat mein



yeh kuch asaan to nahi hai ke hum



ruthte ab bhi hain murawwat mein



woh jo taamer honay wali thi



laga gayi aag is imarat mein



–apne hujra ka kya bayan ke yahan



khoon thoka gaya shararat mein



woh khalaa hai ke sochta hon mein



is se kya guftagu ho khalwat mein



zindagi kis terhan busr ho gi




dil nahi lag raha mohabbat mein

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se