Seena Dhukh Raha Ho By Jaun Elia


سینہ دہک رہا ہو تو کیا چُپ رہے کوئی 


Seena Dhukh Raha Ho By Jaun Elia



کیوں چیخ چیخ کر نہ گلا چھیل لے کوئی 


ثابت ہُوا سکونِ دل و جاں نہیں کہیں 

رشتوں میں ڈھونڈتا ہے تو ڈھونڈا کرے کوئی 

ترکِ تعلقات کوئی مسئلہ نہیں 

یہ تو وہ راستہ ہے کہ بس چل پڑے کوئی 

دیوار جانتا تھا جسے میں، وہ دھول تھی 

اب مجھ کو اعتماد کی دعوت نہ دے کوئی 

میں خود یہ چاہتا ہوں کہ حالات ہوں خراب 

میرے خلاف زہر اُگلتا پھرے کوئی 

اے شخص اب تو مجھ کو سبھی کچھ قبول ہے 

یہ بھی قبول ہے کہ تجھے چھین لے کوئی 

ہاں ٹھیک ہے میں اپنی اَنا کا مریض ہوں 

آخرمیرے مزاج میں کیوں دخل دے کوئی 

اک شخص کر رہا ہے ابھی تک وفا کا ذکر 

کاش اس زباں دراز کا منہ نوچ لے کوئی

Check this out


seenah dehak raha ho to kya chup rahay koi

kyun cheekh cheekh kar nah gala chheel le koi


saabit howa sakoon-e dil o jaan nahi kahin


rishton mein dhoondhta hai to doonda kere koi

tark e taluqaat koi masla nahi

yeh to woh rasta hai ke bas chal parre koi

deewar jaanta tha jisay mein, woh dhool thi

ab mujh ko aetmaad ki dawat nah day koi

mein khud yeh chahta hon ke halaat hon kharab

mere khilaaf zeher ugalta phiray koi

ae shakhs ab to mujh ko sabhi kuch qubool hai

yeh bhi qubool hai ke tujhy chean le koi

haan theek hai mein apni Anaa ka mareez hon

آخرمیرے akhir mere mizaaj mein kyun dakhal day koi

ik shakhs kar raha hai abhi taq wafa ka zikar

kash is zuba daraaz ka mun noch le koi


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se