Subha Lati By John Elia - صبح لاتی ہے


ایک ہی مژدہ صبح لاتی ہے 


Subha Lati By John Elia - صبح لاتی ہے



صحن میں دھوپ پھیل جاتی ہے 


رنگ موسم ہے اور بادِ صبا 

شہر کوچوں میں خاک اُڑاتی ہے 

فرش پہ کاغذ پر اُڑتے پھرتے ہیں 

میز پر گرد جمتی جاتی ہے 

سوچتا ہوں کہ تیری یاد آخر 

اب کسے رات بھر جگاتی ہے 

میں بھی اِذنِ نوا گری چاہوں 

بے دلی بھی تو لب ہلاتی ہے 

سو گئے پیڑ جاگ اٹھی خوشبو 

زندگی خواب کیوں دکھاتی ہے 

اُس سراپا وفا کی فرقت میں 

خواہشِ غیر کیوں ستاتی ہے 

آپ اپنے سے ہم سخن رہنا 

ہمنشیں! سانس پھول جاتی ہے 

کیا ستم ہے کہ اب تیری صورت 

غور کرنے پر یاد آتی ہے 

کون اس گھر کی دیکھ بھال کرے 

روز اِک چیز ٹوٹ جاتی ہے

Check this out

aik hi Musda subah latee hai


sehan mein dhoop phail jati hai


rang mausam hai aur baad-e Saba



shehar kochoon mein khaak aُrhati hai



farsh pay kaghaz par urrty phirtay hain



maiz par gird jmti jati hai



sochta hon ke teri yaad aakhir



ab kisay raat bhar jagati hai



mein bhi azan nawa giri chahoon



be dili bhi to lab hilati hai



so gaye pairr jaag uthi khusbhoo



zindagi khawab kyun dukhati hai



uss saraapaa wafa ki furqat mein



khwahish ghair kyun satati hai



aap –apne se hum sukhan rehna



humnasheen! saans phool jati hai



kya sitam hai ke ab teri soorat



ghhor karne par yaad aati hai



kon is ghar ki dekh bhaal kere



roz ik cheez toot jati hai

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Hai Tamana Naye Shaam By Jaun Elia