Tu Bhi Chup Hai By John Elia - تو بھی چپ ہے


تو بھی چپ ہے، میں بھی چپ ہوں، یہ کیسی تنہائی ہے 
Tu Bhi Chup Hai By John Elia - تو بھی چپ ہے

تیرے ساتھ تری یاد آئی، تو کیا سچ مچ آئی ہے  

شاید وہ دن پہلا دن تھا، پلکیں بوجھل ہونے کا 

مجھ کو دیکھتے ہی اس کی انگڑائی شرمائی ہے  

اس دن پہلی بار ہوا تھا مجھ کو رفاقت کا احساس 

جب اس کے ملبوس کی خوشبو گھر پہنچانے آئی ہے
  
حسن سے عرضِ شوق نہ کرنا حسن کو زک پہنچانا ہے

ہم نے عرضِ شوق نہ کر کے حسن کو زک پہنچائی ہے  

ہم کو اور تو کچھ نہیں سوجھا البتہ اس کے دل میں 

سوزِ رقابت پیدا کر کے اس کی نیند اڑائی ہے  

ہم دونوں مل کر بھی دلوں کی تنہائی میں بھٹکیں گے 

پاگل کچھ تو سوچ یہ تو نے کیسی شکل بنائی ہے  

عشقِ پیچاں کی صندل پر جانے کس دن بیل چڑھے 

کیاری میں پانی ٹھیرا ہے، دیواروں پر کائی ہے  

حسن کے جانے کتنے چہرے، حسن کے جانے کتنے نام

عشق کا پیشہ حسن پرستی، عشق بڑا ہرجائی ہے
  
آج بہت دن بعد میں اپنے کمرے تک آ نکلا تھا

جوں ہی دروازہ کھولا ہے اس کی خوشبو آئی ہے  

ایک تو اتنا حبس ہے پھر میں سانسیں روک کے بیٹھا ہوں 

ویرانی نے جھاڑو دے کر گھر کی دھول اڑائی ہے
Check this out


to bhi chup hai, mein bhi chup hon, yeh kaisi tanhai hai


tairay sath tri yaad aayi, to kya sach mach aayi hai


shayad woh din pehla din tha, palken boujhal honay ka


mujh ko dekhte hi is ki angrai sharmayi hai


is din pehli baar sun-hwa tha mujh ko rafaqat ka ehsas



jab is ke malbos ki khusbhoo ghar pohanchanay aayi hai



husn se arze shoq nah karna husn ko zuk pahunchana hai



hum ne arze shoq nah kar ke husn ko zuk pohanchai hai


hum ko aur to kuch nahi soojha Albata is ke dil mein


soze raqabat peda kar ke is ki neend udai hai



hum dono mil kar bhi dilon ki tanhai mein bhatkain ge



pagal kuch to soch yeh to ne kaisi shakal banai hai


ashqِ pechan ki sandal par jaanay kis din bail charrhey


kiyari mein pani ٹھیرا hai, dewaron par kai hai



husn ke jaanay kitney chehray, husn ke jaanay kitney naam



ishhq ka pesha husn parasti, ishhq bara herjaai hai



aaj bohat din baad mein –apne kamray taq aa nikla tha



jon hi darwaaza khoola hai is ki khusbhoo aayi hai



aik to itna habs hai phir mein sansen rokkk ke betha hon




weerani ne jharoo day kar ghar ki dhool udai hai


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se