Woh Humaray Akhri Aanso They By Jaun Elia - آخری آنسو تھے


اس رایگانی میں 

Woh Humaray Akhri Aanso They By Jaun Elia - آخری آنسو تھے

سو وہ ہمارے آخری آنسو تھے 
so woh humharey akhri aanso they

جو ہم نے گلے مل کر بہائے تھے 
jo hum ney galey mil kar bahaye they


نہ جانے وقت اُن آنکھوں سے پھر کس طور پیش آیا 
na janey waqt un aankhoon sey phir kis tor paaish aya

مگر میری فریبِ وقت کی بہکی ہوئی آنکھوں نے 
magar meri feryb e waqt ki behki hui aankhoon ney

اس کے بعد بھی 
us ka bad bhi

آنسو بہائے ہیں 
aanso bahaye hai


میرے دل نے بہت سے دکھ رچائے ہیں 
mere dil ney bohat dhukh  ra chaaye hai

مگر یوں ہے کہ ماہ و سال کی اس رائیگانی میں 
magar yoon hai k mah wa saal ki es rahgaani mein

مری آنکھیں 
meri aakhien

گلے ملتے ہوئے رشتوں کی فرقت کے وہ آنسو 
galey milty hue rishto ki furqat k woh aanso

پھر نہ رو پائیں
phir naa roo payain

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se