Woh Jo Hai By Jaun Elia - وہ جو ہے


سُوفطا  
Woh Jo Hai By Jaun Elia - وہ جو ہے
 جون ایلیا


وہ جو ہے، وہ مجھے 


میرے شائستہ افکار 


میرے ستودہ خیالات سے 


باز رکھنے کی کوشش میں 


ہر لمحہ سرگرم رہتا ہے 


کل رات کی بات ہے 


وہ پروٹاگورس کا جنا 


نطفۂ نابجائے سو فسطائیاں 


میرے بستر پر کروٹ بدلتے ہوئے 


آپ ہی آپ کہنے لگا 


لفظ معنی سے برتر ہیں 


میں قبلِ سقراط کے سب زباں ور حکیموں 


کے سر کی قسم 


کھا کے کہتا ہوں 


یہ میری اُغلوطہ زائی نہیں 


ژاژ خائی نہیں 


لفظ برتر ہیں معنی سے، معنائے ذی جاہ سے 


اور وہ یوں کہ معنی تو پہلے سے موجود تھے 


سن رہے ہو! میں واہی تباہی نہیں بک رہا 


اپنی بستی کا سرشور، بیہودہ گفتار دیوانہ، جوداگرم 


اپنے ہیجانِ معنی کی حالت میں 


علامہ ایلیاء سے کسی بھی طور کم نہ تھا 


یہ بھی سن لیجیے! 


وائرس تک سرو برگِ الہامِ معنی سے پُرمایہ ہے 


اب رہے لفظ 


[بیچارے، جن کی، جنہیں مُبدعانہ روش سے 


برتنے کے دشوار پرداز کی، رستورانوں کے 


آسان طلب، نابہ ہنگام فقرہ طراز اور غوغائی 


دانشوروں، شاعروں کے تئیں 


ایک خارش زدہ بھیڑ کی چھینک سے 


کچھ زیادہ حقیقت نہیں 


کیا یہ بکواس ہے، صرف بکواس؟] 


ہاں لفظ ایجاد ہیں 


یہ ہزاروں، ہزاروں برس کے 


سراسیمہ گر اجتہادِ تکّلم کا انعام ہیں 


ان کے انساب ہیں 


جن کے اسناد ہیں 


اور پھر انکی تاریخ ہے 


اور معنی کی تاریخ کوئی نہیں

woh jo hai, woh mujhe



mere shaista afkaar


mere Satudah khayalat se


baaz rakhnay ki koshish mein


har lamha sargaram rehta hai


kal raat ki baat hai



woh پروٹاگورس perotagorus ka jina


نطفۂ نابجائے natnafa na bajaye so fastaiyaa فسطائیاں


mere bistar par karvat bdalty hue


aap hi aap kehnay laga


lafz maienay se bartar hain


mein qabal suqraat ke sab zuba war hakeemon


ke sir ki qisam


kha ke kehta hon


yeh meri اغلوطہ a gulotah zai nahi


ژاژ خائی nahi


lafz bartar hain maienay se, معنائے Zee Jah se


aur woh yun ke maienay to pehlay se mojood thay


sun rahay ho! mein waahi tabahi nahi buk raha


apni bastii ka sarshor, behooda guftaar deewana, jodagarm جوداگرم


apne hejaan maienay ki haalat mein



allama ایلیاء elia se kisi bhi tor kam nah tha


yeh bhi sun lijiye !


virus taq saro barg-e Ilham maienay se per maya hai


ab rahay lafz


 becharay, jin ki, jinhein  mbdaanaمبدعانہ rawish se


baratnay ke dushwaar pardaaz ki, rstoranon ke


aasaan talabb, Nabah hangaam fiqra Taraz aur gogai


danishwaron, shayron ke tain


aik kharish zada bheer ki chheenk se


kuch ziyada haqeeqat nahi


kya yeh bakwaas hai, sirf bakwaas? 


haan lafz ijaad hain


yeh hazaron, hazaron baras ke


srasimh gir ijtehaad takalum ka inaam hain


un ke insaab hain


jin ke Asnad hain


aur phir unki tareekh hai


aur maienay ki tareekh koi nahi

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se