Woh Zulf Hai Pershan - وہ زلف ہے پریشاں


وہ زلف ہے پریشاں، ہم سب ادھر چلے ہیں 
Woh Zulf Hai Pershan - وہ زلف ہے پریشاں

تم بھی چلو کہ سارے آشفتہ سر چلے ہیں 

تم بھی چلو غزالاں، کوئے غزال چشماں 

درشن کا آج دن ہے سب خوش نظر چلے ہیں 

رنگ اس گلی خزاں کے موسم میں کھیلنے کو 

خونیں دلاں گئے ہیں خونیں جگر چلے ہیں 

اب دیر مت لگا چل، اے یار بس چلا چل 

دیکھیں یہ خوش نشینیاں آخر کدھر چلے ہیں 

بس اب پہنچ چکے ہیں ہم یاراں سوئے بیاباں 

ساتھ اپنے ہم کو لے کر دیوار و در چلے ہیں 

دنیا تباہ کر کے ہوش آگیا ہے دل کو 

اب تو ہماری سن اب ہم سدھر چلے ہیں 

ہے سلسلے عجب کچھ اس خلوتی سے اپنا 

سب اس کے گھر چلے ہیں ہم اپنے گھر چلے ہیں


Check this out
Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔

urdu roman

woh zulff hai prishan, hum sab idhar chalay hain


tum bhi chalo ke saaray Aashuftah sir chalay hain


tum bhi chalo غزالاں, koye Ghazaal چشماں


darshan ka aaj din hai sab khush nazar chalay hain


rang is gali khizaa ke mausam mein khailnay ko


khonin dlan gaye hain khonin jigar chalay hain


ab der mat laga chal, ae yaar bas chala chal


dekhen yeh khush نشینیاں aakhir kidhar chalay hain


bas ab poanch chuke hain hum yaran soye byaban


sath –apne hum ko le kar deewar o Dur chalay hain


duniya tabah kar ke hosh aagaya hai dil ko


ab to hamari sun ab hum sudhar chalay hain



hai silsilay ajab kuch is khalwati se apna

sab is ke ghar chalay hain hum –apne ghar chalay hain

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se