Youm E Pakistan By John Elia - یوم پاکستان کے موقع پر


سر زمینِ خواب و خیال 

یوم پاکستان کے موقع پر 

Youm E Pakistan By John Elia - یوم پاکستان کے موقع پر

ہم نے اے سر زمیں خواب و خیال 


تجھ سے رکھا ہے شوق کو پر حال 




ہم نے تیری امید گاہوں میں 


کی ہے اپنے مثالیوں کی تلاش 


دل کے رنگِ خیال بندی کو 


تو بھی اک بار دیکھ لے اے کاش 




ختنِ جاں! ترے غزالوں کو 


ہم نے جانِ غزل بنایا ہے 


ہم نے دکھ سہہ کے تیرے لمحوں کو 


جاودانِ غزل بنایا ہے 


ذکر سے ہم ترے حسینوں کے 


شوخ گفتارو خوش کلام ہوئے 


تیری گلیوں میں ہو کے ہم بدنام 


کتنے شہروں میں نیک نام ہوئے 




حسن فردا کے خواب دیکھے ہیں 


شوق نے تیری خواب گاہوں میں 


ہم نے اپنا سراغ پایا ہے 


تیری گلیوں میں تیری راہوں میں 




تیری راتیں ہمارے خوابوں سے 


اور بھی کچھ سہانیاں ہوں گی 


ہم جو باتیں جنوں میں بکتے ہیں 


دیکھنا جاودانیاں ہوں گی 



ہم ہیں وہ ماجرا طلب جن کی 


داستانیں زبانیاں ہوں گی 


تیری محفل میں ہم نہیں ہوں گے 


پر ہماری کہانیاں ہوں گی 



جو تھے دشمن تری امنگوں کے 


کب انہیں بے گرفت چھوڑا ہے 


ہم نے اپنے درشت لہجے سے 


آمروں کا غرور توڑا ہے 



ہم تو خاطر میں بھی نہیں لاتے 


اہلِ دولت کو شہر یاروں کو 


ہم نوا گر ترے عوام کے ہیں 


دوست رکھتے ہیں تیرے پیاروں کو 



تو ہے کاوش کا جن کی گلدستہ 


ان کا نام ان کی نامداری ہو 


تیرے شہروں میں اور دیاروں میں 


حکم محنت کشوں کا جاری ہو 



یہ بڑی سازگار مہلت ہے 


یہ زمانہ بہت غنیمت ہے 



شوق سے ولولے طلب کر لیں 


جو نہ اب تک کیا وہ کر لیں 




خوش بدن! پیرہن ہو سرخ ترا 


دلبرا! بانکپن ہو سرخ ترا 


ہم بھی رنگیں ہوں پر توِ گل سے 


جوشِ گل سے چمن ہو سرخ ترا 




تیرے صحرا بھی پر بہار رہیں 


غنچہ خیز و شگوفہ کار رہیں 


دل بہ دل ربطِ جاں رہے تجھ سے 


صف بہ صف تیرے جاں نثار رہیں 




ہر فسانہ بہم کہا جائے 


میں جو بولوں تو ہم کہا جائے

Check this out

Tu Bhi Chup Hai By John Elia - تو بھی چپ ہے


sir zminِ khawab o khayaal




yom Pakistan ke mauqa par




hum ne ae sir zamee khawab o khayaal





tujh se rakha hai shoq ko par haal







hum ne teri umeed gaahon mein





ki hai apne مثالیوں ki talaash





dil ke rang khayaal bandi ko





to bhi ik baar dekh le ae kash






khitan jaan! tre ghazaalon ko





hum ne jaan-e ghazal banaya hai





hum ne dukh seh ke tairay lamhon ko





جاودان ghazal banaya hai





zikar se hum tre haseenon ke





shokh گفتارو khush kalaam hue





teri galiyo mein ho ke hum badnaam





kitney shehron mein naik naam hue









husn fardaa ke khawab dekhe hain





shoq ne teri khawab gaahon mein





hum ne apna suraagh paaya hai





teri galiyo mein teri raahon mein






teri raatain hamaray khowaboon se





aur bhi kuch سہانیاں hon gi





hum jo baatein junoo mein bektay hain





dekhna جاودانیاں hon gi







hum hain woh maajra talabb jin ki





dastaneen زبانیاں hon gi





teri mehfl mein hum nahi hon ge





par hamari kahaniyan hon gi







jo they dushman tri umangon ke





kab inhen be girift chorra hai





hum ne apne darasht lehjey se





aamron ka ghuroor tora hai







hum to khatir mein bhi nahi laatay





ehley doulat ko shehar yaron ko





hum nawa gir tre awam ke hain





dost rakhtay hain tairay pyaron ko







to hai kawish ka jin ki guldasta





un ka naam un ki نامداری ho





tairay shehron mein aur dyaron mein





hukum mehnat kshon ka jari ho







yeh barri sazgaar mohlat hai





yeh zamana bohat ghanemat hai







shoq se walwalay talabb kar len





jo nah ab taq kya woh kar len









khush badan! perhan ho surkh tra





dilbara! bankpan ho surkh tra





hum bhi rangin hon par to Gul se





joshِ Gul se chaman ho surkh tra







tairay sehraa bhi par bahhar rahen





Ghuncha khaiz o shigoofa car rahen





dil bah dil RABT jaan rahay tujh se





saf bah saf tairay jaan Nisar rahen







har fasana baham kaha jaye





mein jo bolon to hum kaha jaye

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se