Faisla Ab Tak By Jaun Elia - کس سے اظہارِ مدعا کیجے


کس سے اظہارِ مدعا کیجے 


Faisla Ab Tak By Jaun Elia - کس سے اظہارِ مدعا کیجے



آپ ملتے نہیں ہے کیا کیجے 


ہو نا پایا یہ فیصلہ اب تک 

آپ کیا کیجیے تو کیا کیجے 

آپ تھے جس کے چارہ گر وہ جواں 

سخت بیمار ہے دعا کیجے 

ایک ہی فن تو ہم نے سیکھا ہے 

جن سے ملیے اسے خفا کیجے 

ہے تقاضا مری طبیعت کا 

ہر کسی کو چراغ پا کیجے 

ہے تو بارے یہ عالمِ اسباب 

بے سبب چیخنے لگا کیجے 

آج ہم کیا گلا کریں اس سے؟ 

گلہ تنگیِ قبا کیجے 

فطق حیوان پر گراں ہے ابھی 

گفتگو کم سے کم کیا کیجے 

حضرتِ زلفِ غالیہ افشاں 

نام اپنا صبا صبا کیجے 

زندگی کا عجب معاملہ ہے 

ایک لمحے میں فیصلہ کیجے 

مجھ کو عادت ہے روٹھ جانے کی 

آپ مجھ کو منا لیا کیجے 

ملتے رہیے اسی تپاک کے ساتھ 

بیوفائی کی انتہا کیجے 

کوہکن کو ہے خودکشی خواہش 

شاہ بانو سے التجا کیجے 

مجھ سے کہتی تھیں وہ شراب آنکھیں 

آپ وہ زہر مت پیا کیجے 

رنگ ہر رنگ میں ہے داد طلب 

خون تھوکوں تو واہ وا کیجے

Check this out


kis se izhaar-e mudda kije

aap mlitay nahi hai kya kije

ho na paaya yeh faisla ab taq

aap kya kiijiye to kya kije

aap they jis ke charah gir woh jawaa

sakht bemaar hai dua kije

aik hi fun to hum ney seekha hai

jin se maliye usay khafa kije

hai taqaza meri tabiyat ka

har kisi ko chairag pa kije

hai to baare yeh aalmِ asbaab

be sabab cheekhnay laga kije

aaj hum kya gala karen is se ?

gilah Tangi quba kije

فطق hewan par giran hai abhi

guftagu kam se kam kya kije

hzrtِ zulff Ghalia afshaan

naam apna Saba Saba kije

zindagi ka ajab maamla hai

aik lamhay mein faisla kije

mujh ko aadat hai roth jaaney ki

aap mujh ko mana liya kije

mlitay rahiye isi tapaak ke sath

bewafaai ki intahaa kije

kohkn ko hai khudkushi khwahish

Shah Bano se iltija kije

mujh se kehti theen woh sharaab ankhen

aap woh zeher mat piya kije

rang har rang mein hai daad talabb

khoon thokon to wah wa kije

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se