Kuch Suna By John Elia - سرکار کچھ سُنا


سرکار! اب جنوں کی ہے سرکار کچھ سُنا 


Kuch Suna By John Elia -  سرکار کچھ سُنا



ہیں بند سارے شہر کے بازار کچھ سُنا 

شہر قلندراں کا ہوا ہے عجیب طور 

سب ہیں جہاں پناہ سے بیزار کچھ سُنا 

مصروف کوئی کاتبِ غیبی ہے روز و شب 

کیا ہے بھلا نوشتۂ دیوار کچھ سُنا 

آثار اب یہ ہیں کہ گریبان شاہ سے 

الجھیں گے ہاتھ برسرِ دربار کچھ سُنا 

اہل ستم سے معرکہ آرا ہے اک ہجوم 

جس کو نہیں ملا کوئی سردار کچھ سُنا 

خونیں دِلان مرحلہ امتحاں نے آج 

کیا تمکنت دکھائی سرِ وار کچھ سُنا 

کیا لوگ تھے کہ رنگ بچھاتے چلے گئے 

رفتار تھی کہ خون کی رفتار کچھ سُنا

Check this out


sarkar! ab junoo ki hai sarkar kuch suna


hain band saaray shehar ke bazaar kuch suna


shehar قلندراں ka hwa hai ajeeb tor


sab hain jahan panah se bezaar kuch suna


masroof koi katib ghaibi hai roz o shab


kya hai bhala نوشتۂ deewar kuch suna


assaar ab yeh hain ke garibaan Shah se


aljhin ge haath brsrِ darbaar kuch suna


ahal sitam se maarka aara hai ik hajhoom


jis ko nahi mila koi sardar kuch suna


khonin Dilan marhala imteha ne aaj


kya Tamkanat dikhayi sar-e waar kuch suna


kya log they ke rang bichate chalay gaye



raftaar thi ke khoon ki raftaar kuch suna

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se