Naa Rahe By Jaun Elia- مگر نہ یوں ہو کہ ہم اپنے کام کے نہ رہیں


جنوں کریں ہوسِ ننگ و نام کے نہ رہیں 


Naa Rahe By Jaun Elia- مگر نہ یوں ہو کہ ہم اپنے کام کے نہ رہیں



مگر نہ یوں ہو کہ ہم اپنے کام کے نہ رہیں 

زیاں ہے اس کی رفاقت کہ اس کے دوش بدوش 

چلیں تو منظرِ حسنِ خرام کے نہ رہیں 

کہاں ہے وصل سے بڑھ کر کوئی عطا لیکن 

یہ خوب ہے کہ پیام و سلام کے نہ رہیں 

نصیب ہو کوئی دم وہ معاش۔ حال کے ہم 

حسابِ سلسلہ صبح و شام کے نہ رہیں 

یہ بات بھی ہے کہ لمحوں کے لوگ جائیں کہاں 

اگر فریبِ بقا سے دوام کے نہ رہیں 

خدا نہیں ہے تو کیا حق کو چھوڑ دیں اے شیخ 

غضب خدا کا ہم اپنے امام کے نہ رہیں
Check this out


junoo karen hawas nng o naam ke nah rahen

magar nah yun ho ke hum apne kaam ke nah rahen

zayan hai is ki rafaqat ke is ke dosh badosh

chalein to manzar hsnِ Khiraam ke nah rahen

kahan hai wasal se barh kar koi ataa lekin

yeh khoob hai ke payam o سلام ke nah rahen

naseeb ho koi dam woh muaash. haal ke hum

hisaab silsila subah o shaam ke nah rahen

yeh baat bhi hai ke lamhoon ke log jayen kahan

agar freeb_e_ baqa se Dwam ke nah rahen

kkhuda nahi hai to kya haq ko chore den ae Sheikh

gazabb kkhuda ka hum –apne imam ke nah rahen

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se