Safar Chaho By John Elia - سفر چاہوں


خود سے ہر دم ترا سفر چاہوں 
Safar Chaho By John Elia - سفر چاہوں

تجھ زبانی تری خبر چاہوں 

میں تجھے اور تو ہے کیا کیا کچھ 

ہوں اکیلا پہ رات بھر چاہوں 

مجھ سے میرا سراغ کیوں کہ یہ کام 

میں ترے نقشِ پا کہ سر چاہوں 

خونِ گرم اپنا پارچے اپنے 

میں خود اپنی ہی میز پر چاہوں 

ہیں بیاباں مری درازوں میں 

کیوں بگولے برہنہ سر چاہوں 

مجھ کو گہرائی میں اترنا ہے 

پر میں گہرائی سطح پر چاہوں 

کام کیا چیز ہے کہ نام بھی ہیں 

کام کے نام پر نہ کر چاہوں 

اک نظر ڈالنی ہے منظر پر 

کہکشائیں کمر کمر چاہوں 

ضد ہے زخموں میں بیر جذبوں میں 

میں کئی دل کئی جگر چاہوں 

اب تو اس سوچ میں ہوں سرگرداں 

کیا میں چاہوں بھلا اگر چاہوں


Check this out
Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔


2
khud se har dam tra safar chahon

tujh zabani tri khabar chahon

mein tujhy aur to hai kya kya kuch

hon akela pay raat bhar chahon

mujh se mera suraagh kyun ke yeh kaam

mein tre nqshِ pa ke sir chahon
khon-e garam apna پارچے –apne

mein khud apni hi maiz par chahon

hain byaban meri drazon mein

kyun bagoole burhenapa sir chahon

mujh ko geherai mein utarna hai


par mein geherai satah par chahon

kaam kya cheez hai ke naam bhi hain

kaam ke naam par nah kar chahon


ik nazar dalni hai manzar par


kehkashayen kamar kamar chahon


zid hai zakhamo mein bair jazbun mein

mein kayi dil kayi jigar chahon


ab to is soch mein hon srgrdan


kya mein chahon bhala agar chahon

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se