Shab Ba Khair By Jaun Elia - زاہدہ حنا کے نام


زاہدہ حنا کے نام 




Shab Ba Khair By Jaun Elia - زاہدہ حنا کے نام



جاؤ قرار بے دلاں ! شام بخیر شب بخیر 


صحن ہوا دھواں دھواں ! شام بخیر شب بخیر 


شام وصال ہے قریب ، صبح کمال ہے قریب 


پھر نہ رہیں گے سر گراں ، شام بخیر شب بخیر 


وجد کرے گی زندگی جسم بہ جسم ، جاں بہ جاں 


جسم بہ جسم ، جاں بہ جاں ، شام بخیر شب بخیر 


اے میرے شوق کی امنگ ، میرے شباب کی ترنگ 


تجھ پہ شفق کا سائباں ، شام بخیر شب بخیر 


تو میری شاعری میں ہے رنگ طراز و گل فشاں 


تیری بہار بے خزاں ، شام بخیر شب بخیر 


تیرا خیال خواب خلوت جاں کی آب و تاب 


جسم جمیل و نوجواں ، شام بخیر شب بخیر 


ہے میرا نام ارجمند ، تیرا حصار سر بلند 


بانوئے شہر جسم و جاں شام بخیر شب بخیر 


دید سے جان دید تک ، دل سے رخ امید تک 


کوئی نہیں ہے درمیاں شام بخیر شب بخیر 


ہوگئی دیر جاؤ تم ، مجھ کو گلے لگاؤ تم 


تو میری جاں ہے میری جاں! شام بخیر شب بخیر 


شام بخیر شب بخیر ، موج شمیم پیرہن 


تیری مہک رہے گی یاں شام بخیر شب بخیر
Check this out


zahida hina ke naam


جاؤ qarar be dlan! shaam bakhair shab bakhair


sehan sun-hwa dhuwan dhuwan! shaam bakhair shab bakhair

shaam visale hai qareeb, subah kamaal hai qareeb

phir nah rahen ge sir giran, shaam bakhair shab bakhair

wajad kere gi zindagi jism bah jism, jaan bah jaan

jism bah jism, jaan bah jaan, shaam bakhair shab bakhair

ae mere shoq ki umang, mere shabab ki tarang

tujh pay shafaq ka sayibaan, shaam bakhair shab bakhair

to meri shairi mein hai rang Taraz o Gul fishan

teri bahhar be khizaa, shaam bakhair shab bakhair

tera khayaal khawab khalwat jaan ki aabb o taab

jism Jameel o nojwan, shaam bakhair shab bakhair

hai mera naam arjmand, tera hisaar sir buland

بانوئے shehar jism o jaan shaam bakhair shab bakhair

deed se jaan deed taq, dil se rukh umeed taq

koi nahi hai darmia shaam bakhair shab bakhair

hogayi der جاؤ tum, mujh ko gilaay لگاؤ tum

to meri jaan hai meri jaan! shaam bakhair shab bakhair

shaam bakhair shab bakhair, mouj shamem perhan

teri mehak rahay gi yaan shaam bakhair shab bakhair

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se