Tang Aagosh By Jaun Elia-تنگ آغوش میں آباد کروں گا تجھ کو


تنگ آغوش میں آباد کروں گا تجھ کو 


Tang Aagosh By Jaun Elia-تنگ آغوش میں آباد کروں گا تجھ کو



ہوں بہت شاد کہ ناشاد کروں گا تجھ کو 


فکرِ ایجاد میں گم ہوں مجھے غافل نہ سمجھ 

اپنے انداز پر ایجاد کروں گا تجھ کو 

نشہ ہے راہ کی دوری کا کہ ہمراہ ہے تو 

جانے کس شہر میں آباد کروں گا تجھ کو 

میری بانہوں میں بہکنے کی سزا بھی سن لے 

اب بہت دیر میں آزاد کروں گا تجھ کو 

میں کہ رہتا ہوں بصد ناز گریزاں تجھ سے 

تو نہ ہوگا تو بہت یاد کروں گا تجھ کو

Check this out


tang agosh mein abad karoon ga tujh ko

hon bohat shaad ke Nashad karoon ga tujh ko

fikr-e ijaad mein gum hon mujhe ghaafil nah samajh

apne andaaz par ijaad karoon ga tujh ko

nasha hai raah ki doori ka ke hamrah hai to

jaany kis shehar mein abad karoon ga tujh ko

meri baho mein bahkne ki saza bhi sun le

ab bohat der mein azad karoon ga tujh ko

mein ke rehta hon bsd naz gorezan tujh se

to nah hoga to bohat yaad karoon ga tujh ko


ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se