Dulha by John Elia - درہم شکنِ دلہا


دلِ جان! وہ آ پہنچا، درہم شکنِ دلہا 


Dulha by John Elia - درہم شکنِ دلہا



دہم شکنِ دلہا برہم زنِ محفلہا 



یہ نغمہ ساعت کر اے مطربِ کج نغمہ 

ہے نعرہ قاتل در حلقہ بسملہا 

ہے شام کے بے قابو وہ خجر گیاں آشوب 

لو آ ہی گیا کافر اے مجمعِ غافلہا 

گردابِ عبث میں ہم اس موج پہ مائل ہیں 

جو موج کہ یاراں ہے دور افگنِ ساحلہا 

ہم نادرہ جویاں کو وہ راہ خوش آئی ہے 

جو آبلہ پرور ہے بے مرہم منزلہا 

ہم اس کے ہیں اے یاراں اس کے ہیں جو ٹھہرا ہے 

آشوب گرِ جانہا دیوانہ گرِدلہا 

مجنوں پسِ مجنوں ہے بے شورِ فغاں اے دا 

محمل پسِ محمل ہے بے لیلٰی محملہا

Check this out



dil e jaan! woh aa pouncha, darham Shikan dulha



daham Shikan dulha barham zan mhkhilha محفلہا



yeh naghma saa-at kar ae mutarrab kaj naghma



hai naara qaatil Dur halqa bislha بسملہا



hai shaam ke be qaboo woh  khanzerخجر gyan aashob



lau aa hi gaya kafir ae mjmaِ gafilha غافلہا



gardaab abs mein hum is mouj pay mael hain



jo mouj ke yaran hai daur afgan saa hilhaساحلہا



hum nadra جویاں ko woh raah khush aayi hai



jo aabla parwar hai be marham muzilha منزلہا



hum is ke hain ae yaran is ke hain jo thehra hai



aashob gir  janiha deewana  girdulha



majnu pass majnu hai be shore fugaah ae da



mhml pass mhml hai be laila mehmlha

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se