Ghar Virana Tha By John Elia- گھر اک ویرانہ تھا


اب وہ گھر اک ویرانہ تھا بس ویرانہ زندہ تھا 


Ghar Virana Tha By John Elia- گھر اک ویرانہ تھا



سب آنکھیں دم توڑ چکی تھیں اور میں تنہا زندہ تھا 


ساری گلی سنسان پڑی تھی بادِ فنا کے پہرے میں 

ہجر کے دلان اور آنگن میں بس ایک سایہ زندہ تھا 

وہ جو کبوتر اس موکھے میں رہتے تھے کس دیس اڑے 

ایک کا نام نوازندہ تھا اور اک کا بازندہ تھا 

وہ دوپہر اپنی رخصت کی ایسا ویسا دھوکا تھی 

اپنے اندر اپنی لاش اٹھائے میں جھوٹا زندہ تھا 

تھیں وہ گھر راتیں بھی کہانی، وعدے اور پھر دن گننا 

آنا تھا جانے والے کو، جانے والا زندہ تھا 

دستک دینے والے بھی تھے دستک سننے والے بھی 

تھا آباد محلہ سارا ہر دروازہ زندہ تھا 

پیلے پتوں کی سہ پہر کی وحشت پرسہ دیتی تھی 

آنگن میں اک اوندھے گھڑے پر بس اک کوا زندہ تھا

Check this out

Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔

ab woh ghar ik virana tha bas virana zindah tha



sab ankhen dam toar chuki theen aur mein tanha zindah tha




saari gali sun_saan pari thi baad-e fanaa ke pehray mein



hijar ke dilan aur aangan mein bas aik saya zindah tha



woh jo kabootarr is موکھے mein rehtay they kis dais uray



aik ka naam نوازندہ tha aur ik ka بازندہ tha



woh dopehar apni rukhsat ki aisa waisa dhoka thi



–apne andar apni laash uthaye mein jhoota zindah tha



theen woh ghar raatain bhi kahani, waday aur phir din ginna



aana tha jane walay ko, jane wala zindah tha



dastak dainay walay bhi they dastak suneney walay bhi



tha abad mohalla sara har darwaaza zindah tha



peelay pattoun ki sah pehar ki wehshat پرسہ deti thi



aangan mein ik avndhe gharrey par bas ik kuaa zindah tha

ایک تبصرہ شائع کریں

1 تبصرے

Share your thoughts with me

Featured Post

Hai Tamana Naye Shaam By Jaun Elia