Hai Ghom Yaha By Jaun - در ہے گُم یہاں


پہنائی کا مکان ہے اور در ہے گُم یہاں 


Hai Ghom Yaha By Jaun - در ہے گُم یہاں



راہ گریز پائی صر صر ہے گُم یہاں 


وسعت کہاں کہ سمت وجہت پرورش کریں 

بالیں کہاں سے لائیں کہ بستر گُم یہاں 

ہے ذات کا زخم کہ جس کا شگافِ رنگ 

سینے سے دل تلک ہے پہ خنجر ہے گُم یہاں 

بس طور کچھ نہ پوچھ میری بود و باش کا 

دیوار و در ہیں جیب میں اور گھر ہے گُم یہاں 

بیرون ذات کیسے ہے صد ماجرا فروش 

وہ اندرونِ ذات جو اندر ہے گُم یہاں 

کس شاہراہ پر ہوں رواں میں بہ صد شتاب 

اندازِ پا درست ہے اور سر ہے گُم یہاں 

ہیں صفحۂ وجود پہ سطریں کھینچی ہوئی 

دیوار پڑھ رہا ہوں مگر در ہے گُم یہاں

Check this out


pahnai ka makaan hai aur Dur hai gum yahan




raah guraiz payi sr sr hai gum yahan





wusat kahan ke simt وجہت parwarish karen



balen kahan se layn ke bistar gum yahan



hai zaat ka zakham ke jis ka shagaaf rang



seenay se dil talak hai pay khanjar hai gum yahan



bas tor kuch nah pooch meri bood o baash ka



deewar o Dur hain jaib mein aur ghar hai gum yahan



beron zaat kaisay hai sad maajra farosh



woh andronِ zaat jo andar hai gum yahan



kis shahrah par hon rawan mein bah sad Shatab



andazِ pa durust hai aur sir hai gum yahan



hain صفحۂ wujood pay strin khenchi hui



deewar parh raha hon magar Dur hai gum yahan

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se