Hum Kaha Tum Kaha By Jaun Elia


ہم کہاں اور تم کہاں جاناں 


Hum Kaha Tum Kaha By Jaun Elia



ہیں کئی ہجر درمیاں جاناں 



رائیگاں وصل میں بھی وقت ہوا 

پر ہوا خوب رائیگاں جاناں 

میرے اندر ہی تو کہیں گم ہے 

کس سے پوچھوں ترا نشاں جاناں 

عالم بیکرانِ رنگ ہے تو 

تجھ میں ٹھہروں کہاں کہاں جاناں 

میں ہواؤں سے کیسے پیش آؤں 

یہی موسم ہے کیا وہاں جاناں؟ 

روشنی بھر گئی نگاہوں میں 

ہو گئے خواب بے اماں جاناں 

درد مندانِ کوئے دلداری 

گئے غارت جہاں تہاں جاناں 

اب بھی جھیلوں میں عکس پڑتے ہیں 

اب بھی ہے نیلا آسماں جاناں 

ہے جو پر خوں تمہارا عکس خیال 

زخم آئے کہاں کہاں جاناں

Check this out




hum kahan aur tum kahan janaan


hain kayi hijar darmia janaan



rayagan wasal mein bhi waqt hua



par hua khoob rayagan janaan



mere andar hi to kahin gum hai



kis se pouchon tera nishan janaan



aalam e bayikraney rang hai to



tujh mein tehro kahan kahan janaan



mein hawao se kaisay paish aoo


yahi mausam hai kya wahan janaan ?



roshni bhar gayi nigahon mein



ho gaye khawab be amma janaan



dard mandana koye dildari



gaye ghaarat jahan tiha janaan



ab bhi jheelon mein aks parte hain



ab bhi hai neela aasmaa janaan



hai jo par khoo tumhara aks khayaal



zakham aeye kahan kahan janaan

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se