Hum Ko Soda By John Elia -ہم کو سودا تھا


ہم کو سودا تھا سر کے مان میں تھے 
Hum Ko Soda By John Elia -ہم کو سودا تھا

پاؤں پھسلا تو آسمان میں تھے 

ہے ندامت لہو نہ رویا دل 

زخم دل کے کسی چٹان میں تھے 

میرے کتنے ہی نام اور ہمنام 

میرے اور میرے درمیان میں تھے 

میرا خود پر سے اِعتماد اُٹھا 

کتنے وعدے مری اُٹھان میں تھے 

یادِ ایام اک زمانے میں 

ہم کسی یاد کی امان میں تھے 

تھے عجب دھیان کے در و دیوار 

گرتے گرتے بھی اپنے دھیان میں تھے 

واہ! اُن بستیوں کے سنّاٹے 

سب قصیدے ہماری شان میں تھے 

آسمانوں میں گر پڑے یعنی 

ہم زمیں کی طرف اُڑان میں تھے


Check this out

Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔

hum ko soda tha sir ke maan mein they


پاؤں phsla to aasman mein they



hai nedamat lahoo nah roya dil



zakham dil ke kisi chattaan mein they



mere kitney hi naam aur hamnaam



mere aur mere darmain mein they



mera khud par se aetmaad uttah



kitney waday meri uthaan mein they



yaad e ayyaam ik zamane mein



hum kisi yaad ki Amaan mein they



they ajab dheyaan ke Dur o deewar



girtay girtay bhi –apne dheyaan mein they



wah! unn bustiyon ke sannaaTe



sab qaseede hamari shaan mein they



asmano mein gir parre yani



hum zamee ki taraf udan mein they

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se