Hum Nafso By Jaun Elia - ہم نفسو


شکل بھی اک رنگ کی ہو، رنگ کی شب، ہم نفسو 


Hum Nafso By Jaun Elia - ہم نفسو



شوق کا وہ رنگ بدن آئے گا کب، ہم نفسو 



جب وہ دل و جانِ ادا ہو گا یہاں نشہ فزا 

میری ادائیں بھی ذرا دیکھیو تب، ہم نفسو 

تم سے ہو وہ عذر کناں، مجھ سے ہو وہ شکوا کناں 

اور میں خود مست رہوں، بات ہے جب، ہم نفسو 

شعلہ لبی سے ہے سخن، معنی ِ بالا ئے سخن 

اور سخن بھی سوز ہے شعلہ ِ لب، ہم نفسو 

آج ہے سوچو تو ذرا، کس کی یہاں منتظری 

رقصِ طرف ہم نفسو، شورِ طرب ہم نفسو 

اُس کو مری دید کا اک طور کہو، کچھ بھی کہو 

کیا کہوں میں، کیسے کہوں، ہے وہ عجب، ہم نفسو 

نیم شبی کی ہے فضا، ہم بھی ابھی ہوش میں ہیں 

اس کو جو آنا ہے تو پھر آئے بھی، ہم نفسو 

اپنے سے ہر پل ہیں پرے ، ہم ہیں کہاں اپنے ورے 

کیسی تمنا نفسی، کس کی طلب، ہم نفسو

Check this out

Magar Yeh Zakham Hai Ya - مگر یہ زخم یہ مرہم۔۔۔


shakal bhi ik rang ki ho, rang ki shab, hum Nafsoo


shoq ka woh rang badan aeye ga kab, hum Nafsoo



jab woh dil o jaan-e ada ho ga yahan nasha fza



meri adayey bhi zara dhekhiyo  tab, hum Nafsoo



tum se ho woh izr kinaan, mujh se ho woh shikwa kinaan



aur mein khud mast rahon, baat hai jab, hum Nafsoo



shola labi se hai sukhan, maienay cotesbach baala ye sukhan



aur sukhan bhi soaz hai shola cotesbach lab, hum Nafsoo



aaj hai socho to zara, kis ki yahan muntazri


Raqs taraf hum Nafsoo, shore Tarb hum Nafsoo



uss ko meri deed ka ik tor kaho, kuch bhi kaho



kya kahoon mein, kaisay kahoon, hai woh ajab, hum Nafsoo


name shabi ki hai fiza, hum bhi abhi hosh mein hain



is ko jo aana hai to phir aeye bhi, hum Nafsoo



–apne se har pul hain paray, hum hain kahan apne viry



kaisi tamanna nafsi, kis ki talabb, hum Nafsoo

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے

Featured Post

Mirza ghalib fikar insaa par tri hasti se